indian top class businessman family member New Muslim Asad Umar interview roman Urdu/hindi

ahamad awwah : assalaamu alaikum nav muslim asad umar :vaalaikum assalaam ahamad awwah : asad umar saahib abee ( waalid kaleem saahib ) ne bataaya ki aap delhi aaye hue hain, ittifaaq kee baat hai ki mein bhee ek din ke lie phulat , zila muzaffar nagar se aaya tha, shaayad aapase bhee abee ne bataaya hoga ki hamaare yahaan phulat ( madarasa ) se ek daavatee maigazeen ” aramoogaan “ ke naam se nikalatee hai, is ke liye aapase kuchh baaten karana chaahata hoon
asad umar :jee haan, hazarat ne mujhe bataaya tha, pahale to mera khyaal thaaki mere masail kuchh hal ho jaen to hee mein kuchh baaten karoon, magar hazarat ne faramaaya ki ramazaan ka maheena hai aur is maah mein har nekee ka ajr-o-savaab sattar guna ho jaata hai, aur mere rab ne mujhe hidaayat dee hai, hazarat ne kaha ki intaravyoo shaaye karane ka maqasad logon mein deenee khusoosan daavatee spirit paida karana hota hai, to is maheena mein meree baaten aur kaar-guzaaree padh kar kuchh bandon ko nekee khusoosan daavat( islaam se vaaqif karaana )jo sabase bade nekee hai, karane kee taufeeq hogee to doosare maheenon ke muqaabale mein sattar guna ajr-o-savaab milega, phir ye bhee hai ki maut ka ek lamha itameenaan nahin, na maaloom aainda mujhe ye baaten sunaane kee mohalat bhee milegee ya nahin? aap shauq se jo chaahen mujhase savaal karen


ahamad awwah : doctor raahat aapake saath mumbee se aae hue hain aapaka unase kitane dinon se taalluq hai, aur ye dostee aur taalluq kis tarah hua, mujhe mahasoos ho raha hai bilakul haqeeqee bhaeeyon kee tarah aap ek doosare se baaten karate rahe hain
asad umar : doctor saahib se mera taalluq taqareeban saat saal puraana hai.asal mein daaktar saahib ek sayyad gharaana se taalluq rakhate hain, aur shaayad hazarat ne bataaya bhee hoga ki sahaaranapoor ke rahane vaale hain aur shaayad hazarat se unakee door kee kaee rishtedaareeyaan hain, daaktar saahib ne sahaaranapoor se ek maideekal diploma kors kiya tha un ko apanee khaanadaanee kitaabon se baanjhapan aur amaraaz posheeda ( gupt rog )ke bahut kaamayaab nuskhe haath lag gae hain aur vo in donon beemaareeyon ka eelaaj karate hain, eelaaj ke dauraan unhonne ye bhee mahasoos kiya ki miyaan beevee ke azadavaajee taalluqaat aur baar-baar hamal ke girane mein jaadoo aur jinnaat ka bhee asar hota hai, ki aadamee tandarust hai aur beevee ke paas pahuncha to goya bilakul beemaar hai, aur kisee kaam ka nahin, aisa ho jaata hai, to us ke lie unhonne bahut se aamilon se amaleeyaat seekhe, unako tren mein ek faqeer mila aur usane unako jaadoo aur sahr ke eelaaj ke lie amaleeyaat kee ijaazat dee aur daaktar saahib ne eelaaj shuroo kar diya, hamaaree shaadee ko bhee 1 5 /saal ho gae the, hamaare yahaan maalik ne koee khushee nahin dee,aur mere saath kuchh jaadoo ka bhee muaamala tha, mujhe aur meree beevee ko shak thaaki meree ek bhaabhee jo apanee ek bhateejee se meree shaadee karaana chaahatee thee usane ham par jaadoo kiya tha, mere ek byopaaree dost ne jisaka daaktar raahat saahib ne eelaaj kiya tha, unake haan alahamadu lillaah daaktar saahib ke eelaaj se teen aulaad huee theen, mujhe daaktar saahib se milane ka mashvara diya, daaktar saahib ko dekhakar mera zara dil khataka ki chalo beemaaree ka eelaaj to ye kar sakate hain magar paint boo shart bagair daadhee ke angrez dikhane vaale ye saahib jhaad phoonk ka eelaaj kaise karenge, koee soofee sant hee is ka eelaaj kar sakata hai, magar choonki mere dost ka eelaaj unhonne kiya tha aur faayada hua tha is lie mainne unase eelaaj karaaya, maalik ka karana hua ki ab se paanch saal pahale mere yahaan ek betee aur do saal baad ek beta hua, aur hamaaree daaktar saahib kee dostee ho gaee, aur mein aur meree beevee hee nahin meree sasuraal aur gharavaale daaktar saahib ke ek tarah se gulaam ho gae, aur hamaare ghar mein har kaam daaktar saahib ke mashvara se hone laga, rafta-rafta ye taalluq dostee mein badal gaya, maalik ne mujhe bahut kuchh diya hai, mainne daaktar saahib ko ek flait gipht karane ko kaha to daaktar saahib ne saaf mana kar diya aur bole meree apanee kamaee kee jhompadee mere lie kisee raees kee ehasaanamandee mein haasil kie gae mahal se bada mahal hai, aur shaayad daaktar saahib se hamaaree dostee se zyaada mazaboot yahee belaus taalluq tha, yahaan tak ki daaktar saahib eelaaj ke lie jo dava dete the, unhonne us ke bhee paise talab nahin kie aur na tai kie aur jab mainne dene chaahe to bhee maamoolee raqam jo bahut hee kam hotee thee so do sau lekar vaapis kar diye
Aapki Amanat Aapki Sewa Mein Hindi - Urdu 
(good sound,  micro Lady voice )
https://youtu.be/ZOp2xxs-kMo





ahamad awwah : aap zara apana taaaruf to karaeee asad umar : abhee apana poora taaaruf karaane ke haal mein nahin hoon bas itana kaafee hai ki hindostaan ke sabase bade taajir khaanadaan, jisaka aajakal mulk par raaj chal raha hai usee taajir khaanadaan se taalluq rakhata hoon, maalik ka karam ye hai ki usane dhanda ke lihaaz se khoob se bhee zyaada navaaza hai, asalan ham gujaraatee hain aur malik ke bahut se soobon mein hamaare khaanadaan ka kaarobaar hai ahamad awwah : kya abhee aapake qabool islaam ka logon ko ilam nahin hua, yaanee khaanadaan vaalon ko asad umar : abhee mainne aam ailaan nahin kiya hai, inshaallaah khaanadaan ke kuchh logon par kaam chal raha hai, ab to hazarat ke mashvara se jab kahenge ailaan vagaira sab karenge ahamad avvaah : apane qabool islaam ke baare mein zara bataeee asad umar :shaadee ke das saal aulaad na hone kee vajah se ham donon miyaan beevee bahut pareshaan the, aur mujhase zyaada meree beevee pareshaan thee, khaanadaan vaale sab us ko taana dete the, aulaad kee havas mein, darabadar maare maare phirate the, aur jo koee bataata, daan pune sab kuchh karate the, mandiron, aashramon, gurooduvaaron aur daragaahon mein jaakar maatha tekate aur aasheervaad lene kee koshish karate, mumbee mein haajee alee kee daragaah bahut mashahoor hai, is ke baare mein suna tha. haajee alee ke yahaan se be aulaadon ko aulaad mil jaatee hai, vahaan bhee baar-baar jaate, vahaan bhee kuchh hua nahin, ek-baar ham haajee alee kee daragaah gae to ek baaba ne kaha haajee alee ke naam par teen roze ( barat ) har maheene rakhoo, aulaad mil jaegee,us ke baad daaktar saahib hamaaree mulaaqaat ho gaee, hamane daaktar saahib se kaha ki main aur meree beevee ne haajee alee ke naam ke teen barat maan rakhe hain, ham kya karen, daaktar raahat ne kaha ki haajee alee kee daragaah par agar makkhee prasaad uthaakar le jaatee hai to vo use chheen nahin sakate, ye sab bande hain aulaad dena na dena sirph ek maalik ke qabaze mein hai, jo haajee alee ka bhee khuda hai aur hamaara aur aap ka bhee, agar aapako rakhana hee hai to aap is maalik ke lie aur isee ke naam ka barat rakhoo, aur achchha hai ki agala maheena ramazaan ka hai aap barat ke bajaay teen teen roze donon rakhakar is se aulaad dene kee dua karo, hamen choonki bayopaaree dost ne bataaya tha ki daaktar saahib ke eelaaj ke baad hamaare ghar mein khushee aaee hai, hamane daaktar saahib ke mashvara se ramazaan ke teen roze rakhe, roza rakhane ka tareeqa daaktar saahib se maaloom kiya aur khoob ro ro kar oopar vaale maalik se god bharane kee dua kee, davaon ka eelaaj aur daaktar saahib se jhaad phoonk ka bhee chal raha tha, eed ke baad ledee daaktar se chaik karaaya to unhonne khushee kee ummeed dilaee aur agale maheena aur baat pakkee ho gaee, maalik ka karam hai ki usane ek betee de dee, aur is ke do saal baad ek beta bhee de diya, doosaree baat ye huee ki jab mainne aur meree beevee ne roza rakha to ham donon ko bhookh aur pyaas lagee, tab ham donon e see chalaakar bhookh pyaas kam karane ke lie dopahar baad so gae, ittifaaq kee baat mainne aur meree beevee donon ne khaab dekha ki ham donon makka mein hain,aur donon safaid chaadaron mein kaaba ka chakkar laga rahe hain aur hamen vahaan chakkar lagaane mein ajeeb shaanti aur maza aa raha hai, is ke baad mainne intaranait par harm ke chainal par makka aur madeena ko baar-baar dekha, aur mujhe kaaba dekhane ka behad shauq ho gaya, daaktar raahat se hamaaree dostee ho gaee thee, aur ghar aur kaarobaar ka har kaam mein daaktar saahib ke mashvara se karata tha, is lie main unase baar-baar kahata thaaki mujhe makka jaane ka bahut shauq ho raha hai, aap mujhe maalik ka vo ghar ek baar dikha den, daaktar saahib mujhe ummeed dilaate rahe aur kahate rahe ki main zaroor aapako khud vahaan lekar jaoonga, daaktar saahib kaee deshon mein eelaaj ke lie jaate the aur mujh pata laga ki kaee mulkon ka green kaard unake paas hai, aur vahaan unhonne ghar bhee bana rakha hai, taiph saoodee arab mein bhee daaktar saahib ka ek apana makaan hai jo kisee shekh ke naam daaktar saahib ne apane paise se khareed rakha hai ek saal pahale daaktar saahib ne mujhase kaha ki ramazaan aane vaale hain, ramazaan mein makka madeena jaane ka alag hee maza hai, vahaan badee raunak hotee hai, aapako ramazaan mein lekar chaloonga, ramazaan mein jaana zara mahanga hota hai, mainne daaktar saahib se kaha sasta mahanga aap kyon dekhate hain, maalik ne hamen kisee cheez kee kamee nahin rakhee hai, aapaka aur mera donon ka kharch mere zimma hoga, mujhe bata deejie aapaka bizanas klaas mein tikat banava leta hoon, daaktar saahib ne kaha aapake tikat se bizanas klaas mein jaane ke muqaabala mein mere lie paidal vahaan jaana zyaada khushee kee baat hogee, aap apana tikat banavaayen, main khud apana tikat banava loon ga


ahamad avvaah : daaktar saahib kee badee baat asad umar : asal mein daaktar saahib vaaqee bahut oonche darja ke insaan hain, unake muaamalaat se mujhe laga ki vo bade aala darja ke sayyad hain, laalach aur lubhao unake paas ko bhee nahin phatakata, shaayad unakee is sifat ne hee mujhe muslamaanon aur islaam ka gulaam bana diya ahamad avvaah : jee to phir kiya hua asad umar : daaktar saahib ne kisee ejaint se mera umara ka veeza lagava diya ahamad avvaah : aapaka paasaport to hindoo naam se hoga, umara ( kaaba dekhane ka safar ) ka veeza kaise laga, kya qabool islaam ka koee sarteefiket banavaaya tha asad umar:daaktar saahib ne na mujhase kaha ki vahaan jaane ke lie muslamaan hona zarooree hai, aur na koee sarateefeekat banavaaya, daaktar saahib ne bataaya ki jaanane vaale ejaint the, aur sifaarat khaana mein achchha rasookh tha bas unase hee kah diya ki naam aisa hai, asal mein ye muslamaan hain, jhoot hee daaktar saahib ne kah diya, guzashta saal chauthe roza ko ham log mumbee se jadda pahunche, eyaraport se utarakar daaktar saahib ne kaha aapako kaaba main khud apanee gaadee se lekar chaloonga, unakee gaadee jadda mein khadee thee, jo kisee dost ko fon karake unhonne mangava lee thee, unhonne kaha ki aapako ek naatak karana padega. mainne poochha kya, bole nahaakar aapako eharaam ek chaadar safaid oopar aur safaid lungee pahananee padegee, mainne nahaakar jaise daaktar saahib ne kaha eharaam baandh liya, dopahar ek baje ke aas-paas hamane apanee gaadee kisee paarking mein makka se baahar lagaakar rokee aur bason se harm pahunche, jaise hee mein harm mein daakhil hua, mere hosh kharaab ho gae, mujhe aisa laga ki main kisee andher nagaree se roshan duniya mein aagaya hoon, main vo kaifeeyat na kabhee bhool sakata hoon aur na lafzon mein bata sakata hoon, mainne kaaba ko dekha to na jaane mujhe kya mil gaya, mainne daaktar raahat saahib se kaha kya main maalik ke is ghurako chhoo sakata hoon? dopahar mein roza kee vajah se zara bheed kam thee daaktar saahib ne kaha sab log parda pakad kar dua maang rahe hain aapako kaun rok raha hai, shauq se jaeee, mainne kaaba ko jaise hee haath lagaaya, na jaane mainne kiya pa liya, mujhe rona shuroo ho gaya aur phoot phootakar bachcha kee tarah rone ko dil hua aur der tak rota raha, daaktar saahib mujhe dekha to zamazam lekar aae, asal mein kuchh roz se mujhe dil kee takaleef bhee shuroo ho gaee thee, vo dar gae ki kuchh na ho jaegee, daaktar saahib ne mujhe zamazam pilaaya, mainne unase rote hue kaha, mainne bahut galat kya, mujhe is paak ghar mein aana nahin chaaheee tha, mein to apavitr (naapaak) hoon, daaktar saahib ne kaha apavitr kahaan ho tum, tumane yahaan aakar paak eharaam baandha hai, mainne kaha ye aatma (rooh) to naapaak hai, mujhe vo kalima padhavao jo aatma ko pavitr ( paak ) karata hai, daaktar saahib ne mujhe jaldee jaldee bataaya ki ye kalima hai : ‘‘ashahadu allailaah illallaahu va ashahadu ann muhammadan abduhoo va rasooluhoo’’ ‘‘main gavaahee deta hoon is baat kee ki allaah ke siva koee upaasana yogy nahin (vah akela hai usaka koee saajhee nahin) aur main gavaahee deta hoon ki muhammad allaah ke bande aur usake rasool (doot) hain’’. mainne kaha daaktar saahib aise dil se nahin , mujhe antar aatma( andar dil ) se padhavao, unhonne mujhe kalima padhavaaya, daaktar saahib se kah kar ham logon ne daaraalatoheed jo harm ke baraabar ek phaeev staar bada hotal hai, is ke kaaba vev sveet (jahaan se kaaba dikhaee deta hai ) do roz ke lie buk karaaye, aur ghar fon kar diya ki mujhe kaafee dinon se dil kee takaleef ho rahee thee, yahaan par ek dil ka daaktar mil gaya hai, main eelaaj karaake aaoonga ahamad avvaah : maasha allaah us ke baad aap do roz tak vaheen rahe asad umar :jee, ye do roz kaise guzar gae mein bayaan nahin kar sakata, ramazaan ul-mubaarak kee raunak aur harm kee nooraaniyat aur sukoon shaanti, bas mein namaaz padhane harm jaata( jaisee bhee padh paata ) ، ek tavaaf ( kaaba ka chakkar ) rozaana karata, aur oopar rum mein ja kar baith jaata, saara saara din aur raat ka aksar hissa harm ko dekhata rahata, harm kee alag shaan, mein bayaan nahin kar sakata ki vo shab-o-roz mere kaise guzare ahamad avvaah : is ke baad hindostaan aakar aapane kya mahasoos kiya asad umar : vahaan rah kar daaktar saahib ne mujhe mein ek naujavaan maulaana saahib ka nazam kar diya tha, unhonne mujhe deen kee buniyaadee baaten bataen aur namaaz yaad karaee, aur padhana sikhaee, alahamadu lillaah mein paabandee se paanch vaqt kee namaaz, aur tahajjud kee aath rakaat padh raha hoon ahamad avvaah : aapake ghar vaalon ko namaaz padhane par etaraaz nahin hai asad umar : meree beevee jo daaktar saahib kee bahut fain hai, us ko mainne abhee tak nahin bataaya hai ki main muslamaan ho gaya hoon, is maheena hazarat ne mujhe ek maulaana ka nambar diya hai, unako daaktar saahib ke saath lekar apanee beevee ko kalima padhavaane ka iraada hai, mujhe ummeed hai ki vo mere saath namaaz padhengee aur unhen bhee shaanti mahasoos hogee. inshaallaah vo kalima padhane mein der nahin karengee ahamad avvaah : abee ( kaleem saahib ) bata rahe the ki pahale daaktar saahib khud bhee namaaz roza ke paaband nahin the asad umar : daaktar saahib vaaqee namaaz roza se door the, aur deen se unakee dooree kee is se zyaada aur kya baat ho sakatee hai ki unhonne mujhe harm le jaane ke lie ek baar bhee nahin kaha, ki vahaan jaane ke lie muslamaan hona zarooree hai, chalo oopar se hee kalima to padh loo ( aur vahaan ramazaan mein paanee pila diya ) ، daaktar saahib ka khaanadaanee taalluq sayyad gharaana se hai, vo kairaktar ke lihaaz se bahut oonchee satah ke insaan hain, jab main namaaz padhane laga aur namaaz mein mujhe jo maza aata hai is ko daaktar saahib se mainne sheyar kiya, to allaah ka shukr hai ki vo bhee paanch vaqt kee namaaz aur tahajjud kee paabandee karane lage ahamad avvaah : abee ( kaleem saahib ) bata rahe the ki is ke baad daaktar saahib bhee daavat (islaam se taaaruf,vaaqif karaane ) se lag gae asad umar : mujhe kalima padhavaaya to unhen khyaal hua ki is tarah to bahut se log muslamaan ho sakate hain, us ke baad jo mareez unake paas aata us ko kalima padhavaate the, mere baad daaktar saahib ne kaee logon ko kalima padhavaaya, unamen se kaee log aise muslamaan bane ki unake haalaat dekhakar sahaaba ( rasool ke saathee ) kee yaad taaza hotee hai, phir daaktar saahib ko khyaal hua ki jab yahee kaam karana hai to seekh kar kaam karoon, unake ek saale khataulee, zila muzaffaranagar ke rahane vaale hain,unhonne hazarat ka taaaruf kiraaya, hazarat se vo madeena mein mile, phir mumbee mein ghar aane ko kaha, aur alahamadu lillaah ab daaktar saahib jismaanee, baanjhapan aur posheeda amaraaz ke daaktar hone se zyaada rooh ke daaktar yaanee ful taim daee ( islaam se taaaruf,vaaqif karaane vaale ) ban gae hain. unhonne hazarat se 3 2 / aise logon ko baiat kiraaya jo sab taajir (kaarobaaree ) hain, aur ek saal ke andar allaah ne unako daaktar saahib ke zareeya hidaayat ata faramaee hai

ahamad awwah : ab aapaka aainda qya prograam hai
asad umar :ramazaan ul-mubaarak mein is saal apanee beevee ke saath agar unhonne kalima padh liya to harm mein ramazaan guzaarane ka iraada hai, allaah se pooree ummeed hai vo zaroor unhen hidaayat dega. harm ke ramazaan kee baat hee kuchh aur hai, aisa lagata hai ki jannat is zameen par utar aaee hai, hazarat ne bataaya ki ramazaan hidaayat ke nisaab quraan-e-majeed ke nuzool ka seezan hai, aur hidaayat ke jashn ka maheena hai,aur kaaba ke baare mein quraan ne kaha hai ki vo aalimon ke lie hidaayat hai( hudal lil aalameen ) maulaana ahamad mein apanee baat bataoon makka aakar ramazaan ka maheena kisee aisee jagah aae ki jahaan par kisee ko pata na chale ki ramazaan aae ki nahin, to main bahut tauba tauba karake kah raha hoon ki main gaarantee se ramazaan kee nooraaniyat aur hidaayat ko antar aatma yaanee apanee andaroonee rooh se mahasoos karake bataadoon ga ki ramazaan kee nooraaniyat aur hidaayat ka maheena shuroo ho gaya hai, aur agar meree aankhon par pattee baandh kar mujhe ghoomate ghumaate bagair batae harm shareef mein le jaaya jaaye to mein ek hazaar parasent gaarantee ke saath sau baar tauba tauba karake kahata hoon ki main apane andar kee aankhon se rab ka noor, harm ka noor vahaan ke aalamee hidaayat ke maahaul ko mahasoos karake shart laga kar bata doonga ki mujhe harm mein daakhil kar diya gaya hai main hazarat se bhee kah raha tha ki ramazaan aur harm mein jitana daavat aur hidaayat ke lie maahaul saazagaar hota hai utana doosare dinon aur muqaam par is ka hazaaravaan hissa bhee nahin hota, is lie maah-e-mubaarak mein daavat ke spaishal plaan banaane chaaheee aur harm kee taqaazon ko bhee daavat ke lie khusoosee taur par istimaal karana chaaheee ahamad avvaah :vaaqee aapane bahut aham nukta kee taraf tavajja dilaee, .... quraan-e-majeed ka ek achhoota pahaloo hai, is par aam taur par daee hazaraat bhee tavajja nahin karate aur ham sabhee log ramazaan ul-mubaarak ke hidaayat aur daavat ke seezan mein zyaada islaam kee daavat kee maarketing karane ke bajaay, roza mein kaise ye kaam hoga vo kaam hoga sochate hain. doosaree ibaadaat mein lag jaate hain, aise hee harm ke hudal lil aalameen ke pahaloo se kamaahaqa faayada nahin uthaaya jaata. jaza kam allaah aapane aham pahaloo kee taraf tavajja dilaee asad umar : aapakee muhabbat hai jo aisa samajhate hain varna mein kya hoon ahamad avvaah : qaareen aramoogaan ( maahanaama ) ke lie aap koee paigaam denge asad umar : bas mein to yahee kahoonga ki mein ek khaanadaanee taajir hoon, ham log har cheez ko bayoporee zahaneeyat se dekhate hain, is mubaarak hidaayat aur daavat ke seezan mein islaam kee maarketing aur daavat ko bade paimaana par karana chaaheee ki hidaayat kee raah mein rukaavat paida karane vaale shayaateen bhee qaid karalie jaate hain, aur hidaayat daavat kee mandee aur baazaar harm ( kaaba ) hai. jisake baare mein khud hidaayat dene vaale maalik ne hudal lil aalameen kee khabar dee hai, is baazaar mein thok mein hidaayat lene aur vahaan se aane vaale ritel bayoporiyon ko distareebyootar banaane ke lie ek mazaboot prograam banaana chaaheee ahamad avvaah : maasha allaah bahut khoob, jazaakam allaah bahut bahut shukriya asad umar :shukriya to aapaka ki maah-e-mubaarak mein mujhe is kaar-e-khair mein shareek kiya, aapase aur aramoogaan ke tamaam qaareen se mere saare parivaar aur pooree insaaniyat ke lie khusoosan is maah-e-mubaarak mein dua kee darakhaast kee jaatee hai assalaamu alaikum
----
Nau Muslim shamim bhai (Shyam sundarQ) se ek mulaqat




indian top class businessman family نو مسلم اسعد عمر صاحب interview

 armughan.net احمد اوّاہ: السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ 
اسعد عمر: وعلیکم السلام و رحمۃ اللہ و برکاتہ
احمد اوّاہ َ: اسعد عمر صاحب ابی (والدکلیم صاحب) نے بتایاکہ آپ دہلی آئے ہوئے ہیں، اتفاق کی بات ہے کہ میں بھی ایک دن کے لئے پھلت، ضلع مظفر نگر سے آیا تھا، شاید آپ سے بھی ابی نے بتایا ہوگاکہ ہمارے یہاں پھُلت(مدرسہ) سے ایک دعوتی میگزین ”ارمغان“ کے نام سے نکلتی ہے، اس کے لئے آپ سے کچھ باتیں کرنا چاہتا ہوں۔
اسعد عمر:جی ہاں، حضرت نے مجھے بتایا تھا، پہلے تو میرا خیال تھاکہ میرے مسائل کچھ حل ہوجائیں تو ہی میں کچھ باتیں کروں، مگر حضرت نے فرمایاکہ رمضان کا مہینہ ہے اور اس ماہ میں ہر نیکی کا اجر و ثواب ستر گنا ہوجاتا ہے، او ر میرے رب نے مجھے ہدایت دی ہے، حضرت نے کہاکہ انٹرویو شائع کرنے کامقصد لوگوں میں دینی خصوصاً دعوتی اِسپرِٹ پیدا کرنا ہوتا ہے، تو اس مہینہ میں میری باتیں اور کارگزاری پڑھ کر کچھ بندوں کو نیکی خصوصاً دعوت(اسلام سے واقف کرانا) جو سب سے بڑے نیکی ہے، کرنے کی توفیق ہوگی تو دوسرے مہینوں کے مقابلہ میں ستر گنااجر و ثواب ملے گا، پھر یہ بھی ہے کہ موت کاایک لمحہ اطمینان نہیں، نہ معلوم آئندہ مجھے یہ باتیں سنانے کی مہلت بھی ملے گی یا نہیں؟ آپ شوق سے جو چاہیں مجھ سے سوال کریں۔



احمد اوّاہ:ڈاکٹر راحت آپ کے ساتھ ممبئی سے آئے ہوئے ہیں آپ کا ان سے کتنے دنوں سے تعلق ہے،او ریہ دوستی اور تعلق کس طرح ہوا، مجھے محسوس ہورہاہے بالکل حقیقی بھائیوں کی طرح آپ ایک دوسرے سے باتیں کرتے رہے ہیں؟
اسعد عمر:ڈاکٹر صاحب سے میرا تعلق تقریباً سات سال پرانا ہے۔اصل میں ڈاکٹر صاحب ایک سید گھرانہ سے تعلق رکھتے ہیں، اور شاید حضرت نے بتایا بھی ہوگاکہ سہارن پور کے رہنے والے ہیں اور شاید حضرت سے ان کی دور کی کئی رشتہ داریاں ہیں، ڈاکٹر صاحب نے سہارن پور سے ایک میڈیکل ڈپلوما کورس کیا تھاان کو اپنی خاندانی کتابوں سے بانجھ پن اور امراض پوشیدہ(گُپت روگ) کے بہت کامیاب نسخے ہاتھ لگ گئے ہیں اور وہ ان دونوں بیماریوں کا علاج کرتے ہیں، علاج کے دوران انہوں نے یہ بھی محسوس کیاکہ میاں بیوی کے ازدواجی تعلقات اور باربار حمل کے گرنے میں جادو اور جنّات کا بھی اثر ہوتاہے، کہ آدمی تندرست ہے اور بیوی کے پاس پہنچا تو گویا بالکل بیمار ہے، اور کسی کام کا نہیں، ایسا ہوجاتا ہے، تو اس کے لئے انہوں نے بہت سے عاملوں سے عملیات سیکھے، ان کو ٹرین میں ایک فقیر ملااور اس نے ان کو جادو اور سحر کے علاج کے لئے عملیات کی اجازت دی اور ڈاکٹر صاحب نے علاج شروع کردیا، ہماری شادی کو بھی ۱۵/ سال ہوگئے تھے، ہمارے یہاں مالک نے کوئی خوشی نہیں دی،اور میرے ساتھ کچھ جادو کا بھی معاملہ تھا، مجھے اور میری بیوی کو شک تھاکہ میری ایک بھابھی جو اپنی ایک بھتیجی سے میری شادی کرانا چاہتی تھی اس نے ہم پر جادو کیا تھا، میرے ایک بیوپاری دوست نے جس کا ڈاکٹر راحت صاحب نے علاج کیاتھا، ان کے ہاں الحمد للہ ڈاکٹر صاحب کے علاج سے تین اولاد ہوئی تھیں، مجھے ڈاکٹر صاحب سے ملنے کا مشورہ دیا، ڈاکٹر صاحب کو دیکھ کر میرا ذرا دل کھٹکاکہ چلو بیماری کا علاج تو یہ کرسکتے ہیں مگر پینٹ بو شرٹ بغیر داڑھی کے انگریز دکھنے والے یہ صاحب جھاڑ پھونک کا علاج کیسے کریں گے، کوئی صوفی سنت ہی اس کا علاج کرسکتا ہے، مگر چونکہ میرے دوست کا علاج انہوں نے کیا تھااور فائدہ ہوا تھااس لئے میں نے ان سے علاج کرایا، مالک کا کرنا ہواکہ اب سے پانچ سال پہلے میرے یہاں ایک بیٹی اور دو سال بعد ایک بیٹا ہوا، اور ہماری ڈاکٹر صاحب کی دوستی ہوگئی، اور میں اور میری بیوی ہی نہیں میری سسرال اور گھروالے ڈاکٹر صاحب کے ایک طرح سے غلام ہوگئے، اور ہمارے گھرمیں ہر کام ڈاکٹر صاحب کے مشورہ سے ہونے لگا، رفتہ رفتہ یہ تعلق دوستی میں بدل گیا، مالک نے مجھے بہت کچھ دیا ہے، میں نے ڈاکٹر صاحب کو ایک فلیٹ گفٹ کرنے کوکہاتو ڈاکٹر صاحب نے صاف منع کردیاور بولے میری اپنی کمائی کی جھونپڑی میرے لئے کسی رئیس کی احسان مندی میں حاصل کئے گئے محل سے بڑا محل ہے، اور شاید ڈاکٹر صاحب سے ہماری دوستی سے زیادہ مضبوط یہی بے لوث تعلق تھا، یہاں تک کہ ڈاکٹر صاحب علاج کے لئے جو دوا دیتے تھے، انہوں نے اس کے بھی پیسے طلب نہیں کئے اور نہ طے کئے اور جب میں نے دینے چاہے تو بھی معمولی رقم جو بہت ہی کم ہوتی تھی سو دو سو لے کر واپس کردیئے۔


Aapki Amanat Aapki Sewa Mein Hindi - Urdu 
(good sound,  micro Lady voice )
https://youtu.be/ZOp2xxs-kMo




احمد اوّاہ:آپ ذرا اپنا تعارف تو کرائیے؟
اسعد عمر:ابھی اپنا پورا تعارف کرانے کے حال میں نہیں ہوں بس اتنا کافی ہے کہ ہندوستان کے سب سے بڑے تاجر خاندان، جس کا آج کل ملک پر راج چل رہاہے اسی تاجر خاندان سے تعلق رکھتا ہوں، مالک کا کرم یہ ہے کہ اس نے دھندہ کے لحاظ سے خوب سے بھی زیادہ نوازا ہے، اصلاً ہم گجراتی ہیں اور ملک کے بہت سے صوبوں میں ہمارے خاندان کا کاروبار ہے۔
احمد اوّاہ:کیا ابھی آپ کے قبول اسلام کا لوگوں کو علم نہیں ہوا، یعنی خاندان والوں کو؟
اسعد عمر:ابھی میں نے عام اعلان نہیں کیا ہے، انشاء اللہ خاندان کے کچھ لوگوں پر کام چل رہا ہے، اب تو حضرت کے مشورہ سے جب کہیں گے اعلان وغیرہ سب کریں گے۔

احمد اوّاہ:اپنے قبول اسلام کے بارے میں ذرا بتائیے؟
اسعد عمر:شادی کے دس سال اولاد نہ ہونے کی وجہ سے ہم دونوں میاں بوی بہت پریشان تھے، اور مجھ سے زیادہ میری بیوی پریشان تھی، خاندان والے سب اُس کو طعنہ دیتے تھے، اولاد کی ہوس میں، دربدر مارے مارے پھرتے تھے، اور جو کوئی بتاتا، دان پُنے سب کچھ کرتے تھے، مندروں، آشرموں، گردوواروں اور درگاہوں میں جاکر ماتھا ٹیکتے اور آشیرواد لینے کی کوشش کرتے، ممبئی میں حاجی علی کی درگاہ بہت مشہور ہے، اس کے بارے میں سنا تھا۔ حاجی علی کی درگاہ بہت مشہور ہے، اس کے بارے میں سنا تھا حاجی علی کے یہاں سے بے اولادوں کو اولاد مل جاتی ہے، وہاں بھی باربار جاتے، وہاں بھی کچھ ہوانہیں، ایک بار ہم حاجی علی کی درگاہ گئے تو ایک بابا نے کہا حاجی علی کے نام پر تین روزے(برت) ہر مہینے رکھو، اولاد مل جائے گی،ا س کے بعد ڈاکٹر صاحب ہماری ملاقات ہوگئی، ہم نے ڈاکٹر صاحب سے کہا کہ میں اورمیری بیوی نے حاجی علی کے نام کے تین برت مان رکھے ہیں، ہم کیا کریں، ڈاکٹر راحت نے کہا کہ حاجی علی کی درگاہ پر اگرمکھی  پرساد اٹھاکر لے جاتی ہے تو وہ اسے چھین نہیں سکتے، یہ سب بندے ہیں اولاد دینا نہ دینا صرف ایک مالک کے قبضہ میں ہے، جو حاجی علی کا بھی خدا ہے اور ہمارا اور آپ کا بھی، اگر آپ کو رکھنا ہی ہے تو آپ اس مالک کے لئے اور اسی کے نام کا برت رکھو، اور اچھا ہے کہ اگلا مہینہ رمضان کا ہے آپ برت کے بجائے تین تین روزے دونوں رکھ کر اس سے اولاد دینے کی دعا کرو، ہمیں چونکہ بیوپاری دوست نے بتایا تھاکہ ڈاکٹر صاحب کے علاج کے بعد ہمارے گھر میں خوشی آئی ہے، ہم نے ڈاکٹر صاحب کے مشورہ سے رمضان کے تین روزے رکھے، روزہ رکھنے کا طریقہ ڈاکٹر صاحب سے معلوم کیااور خوب رو رو کر اوپر والے مالک سے گود بھرنے کی دعا کی، دواؤں کا علاج اور ڈاکٹر صاحب سے جھاڑ پھونک کابھی چل رہا تھا، عید کے بعد لیڈی ڈاکٹر سے چیک کرایاتو انہوں نے خوشی کی امید دلائی اور اگلے مہینہ اور بات پکی ہوگئی، مالک کا  کرم ہے کہ اس نے ایک بیٹی دے دی، اور اس کے دو سال بعد ایک بیٹا بھی دے دیا، دوسری بات یہ ہوئی کہ جب میں نے اور میری بیوی نے روزہ رکھاتو ہم دونوں کو بھوک اور پیاس لگی، توہم دونوں اے سی چلاکر بھوک پیاس کم کرنے کے لئے دوپہر بعد سوگئے، اتفاق کی بات میں نے اور میری بیوی دونوں نے خواب دیکھاکہ ہم دونوں مکہ میں ہیں،اور دونوں سفید چادروں میں کعبہ کا چکر لگا رہے ہیں اور ہمیں وہاں چکر لگانے میں عجیب شانتی اور مزا آرہا ہے، اس کے بعد میں نے انٹرنیٹ پر حرم کے چینل پر مکہ اور مدینہ کو باربار دیکھا، اور مجھے کعبہ دیکھنے کا بے حد شوق ہوگیا، ڈاکٹر راحت سے ہماری دوستی ہوگئی تھی، اور گھر اور کاروبار کا ہرکام میں ڈاکٹر صاحب کے مشورہ سے کرتا تھا، اس لئے میں ان سے باربار کہتا تھاکہ مجھے مکہ جانے کا بہت شوق ہورہاہے، آپ مجھے مالک کاوہ گھرایک بار دکھا دیں، ڈاکٹر صاحب مجھے امید دلاتے رہے اور کہتے رہے کہ میں ضرور آپ کو خود وہاں لے کر جاؤں گا، ڈاکٹر صاحب کئی دیشوں میں علاج کے لئے جاتے تھے اور مجھ پتہ لگاکہ کئی ملکوں کاگرین کارڈ ان کے پاس ہے، اور وہاں انہوں نے گھر بھی بنا رکھاہے، طائف سعودی عرب میں بھی ڈاکٹر صاحب کا ایک اپنا مکان ہے جو کسی شیخ کے نام ڈاکٹر صاحب نے اپنے پیسے سے خرید رکھا ہے۔
ایک سال پہلے ڈاکٹر صاحب نے مجھ سے کہاکہ رمضان آنے والے ہیں، رمضان میں مکہ مدینہ جانے کاالگ ہی مزا ہے، وہاں بڑی رونق ہوتی ہے، آپ کو رمضان میں لے کر چلوں گا، رمضان میں جانا ذرا مہنگا ہوتاہے، میں نے ڈاکٹر صاحب سے کہا سستا مہنگا آپ کیوں دیکھتے ہیں، مالک نے ہمیں کسی چیز کی کمی نہیں رکھی ہے، آپ کا اور میرا دونوں کا خرچ میرے ذمہ ہوگا، مجھے بتا دیجئے آپ کا بزنس کلاس میں ٹکٹ بنوالیتا ہوں، ڈاکٹر صاحب نے کہا آپ کے ٹکٹ سے بزنس کلاس میں جانے کے مقابلہ میں میرے لئے پیدل وہاں جانا زیادہ خوشی کی بات ہوگی، آپ اپنا ٹکٹ بنوائیں، میں خود اپنا ٹکٹ بنوالوں گا۔





احمد اوّاہ:ڈاکٹر صاحب کی بڑی بات؟
اسعد عمر:اصل میں ڈاکٹر صاحب واقعی بہت اونچے درجہ کے انسان ہیں، ان کے معاملات سے مجھے لگاکہ وہ بڑے اعلیٰ درجہ کے سیّد ہیں، لالچ اور لُبھاؤ ان کے پاس کوبھی نہیں پھٹکتا، شاید ان کی اس صفت نے ہی مجھے مسلمانوں اور ا سلام کا غلام بنا دیا۔

احمد اوّاہ:جی تو پھر کیا ہوا؟
اسعد عمر:ڈاکٹر صاحب نے کسی ایجنٹ سے میرا عمرہ کا ویزہ لگوادیا۔
احمد اوّاہ: آپ کا پاسپورٹ تو ہندو نام سے ہوگا، عمرہ(کعبہ دیکھنے کاسفر) کا ویزہ کیسے لگا، کیا قبول اسلام کا کوئی سرٹیفیکیٹ بنوایا تھا؟

احمد اوّاہ:ڈاکٹر صاحب نے نہ مجھ سے کہاکہ وہاں جانے کے لئے مسلمان ہونا ضروری ہے، اور نہ کوئی سرٹیفیکٹ بنوایا، ڈاکٹر صاحب نے بتایاکہ جاننے والے ایجنٹ تھے، اور سفارت خانہ میں اچھا رسوخ تھا بس ان سے ہی کہہ دیا کہ نام ایسا ہے، اصل میں یہ مسلمان ہیں، جھوٹ ہی ڈاکٹر صاحب نے کہہ دیا، گزشتہ سال چوتھے روزہ کو ہم لوگ ممئی سے جدہ پہنچے، ایئرپورٹ سے اترکر ڈاکٹر صاحب نے کہا آپ کو کعبہ میں خود اپنی گاڑی سے لے کر چلوں گا، ان کی گاڑی جدہ میں کھڑی تھی، جو کسی دوست کو فون کرکے انہوں نے منگوالی تھی، انہوں نے کہاکہ آپ کو ایک ناٹک کرنا پڑے گا۔ میں نے پوچھا کیا، بولے نہاکر آپ کو احرام ایک چادر سفید اوپر اور سفید لنگی پہننی پڑے گی، میں نے نہاکر جیسے ڈاکٹر صاحب نے کہا احرام باندھ لیا، دوپہر ایک بجے کے آس پاس ہم نے اپنی گاڑی کسی پارکنگ میں مکہ سے باہر لگاکر روکی اور بسوں سے حرم پہنچے، جیسے ہی میں حرم میں داخل ہوا، میرے ہوش خراب ہوگئے، مجھے ایسا لگاکہ میں کسی اندھیر نگری سے روشن دنیا میں آگیا ہوں، میں وہ کیفیت نہ کبھی بھول سکتا ہوں اور نہ لفظوں میں بتا سکتا ہوں، میں نے کعبہ کو دیکھاتو نہ جانے  مجھے کیا مل گیا، میں نے ڈاکٹر راحت صاحب سے کہاکیا میں مالک کے اس گھرکو چھو سکتا ہوں؟ دوپہر میں روزہ کی وجہ سے ذرا بھیڑ کم تھی ڈاکٹر صاحب نے کہا سب لوگ پردہ پکڑ کر دعا مانگ رہے ہیں آپ کو کون روک رہا ہے، شوق سے جائیے، میں نے کعبہ کو جیسے ہی ہاتھ لگایا، نہ جانے میں نے کیا پالیا، مجھے رونا شروع ہوگیااور پھوٹ پھوٹ کر بچہ کی طرح رونے کو دل ہواور دیر تک روتا رہا، ڈاکٹر صاحب مجھے دیکھا تو زمزم لے کر آئے، اصل میں کچھ روز سے مجھے دل کی تکلیف بھی شروع ہوگئی تھی، وہ ڈر گئے کہ کچھ نہ ہوجائے، ڈاکٹر صاحب نے مجھے زمزم پلایا، میں نے ان سے روتے ہوئے کہا، میں نے بہت غلط کیا، مجھے اس پاک گھر میں آنا نہیں چاہئے تھا، میں تو اَپوتر (ناپاک) ہوں، ڈاکٹر صاحب نے کہا اپوتر کہاں ہو تم، تم نے یہاں آکر پاک احرام باندھا ہے، میں نے کہا یہ آتما (روح) تو ناپاک ہے، مجھے وہ کلمہ پڑھواؤ جو آتما کو پوتر (پاک) کرتا ہے، ڈاکٹر صاحب نے مجھے جلدی جلدی بتایا کہ یہ کلمہ ہے: اشہدُ اَن لا اِلٰہ الاللہ، اشہد اَن محمد اًعبدہُ و رسولہٰ۔ میں نے کہا ڈاکٹر صاحب ایسے دل سے نیں، مجھے انتر آتما (اندر دل) سے پڑھواؤ، انہوں نے مجھے کلمہ پڑھوایا، ڈاکٹر صاحب سے کہہ کر ہم لوگوں نے دارالتوحید جو حرم کے برابر ایک فائیو اسٹار بڑا ہوٹل ہے، اس کے کعبہ ویو سویٹ (جہاں سے کعبہ دکھائی دیتا ہے) دو روز کے لئے بک کرائے، اور گھر فون کردیاکہ مجھے کافی دنوں سے دل کی تکلیف ہورہی تھی، یہاں پر ایک دل کا ڈاکٹر مل گیاہے، میں علاج کراکے آؤں گا۔

احمد اوّاہ:ماشاء اللہ اس کے بعد آپ دو روز تک وہیں رہے؟
اسعد عمر:جی، یہ دو روز کیسے گزر گئے میں بیان نہیں کرسکتا، رمضان المبارک کی رونق اور حرم کی نورانیت اور سکون شانتی، بس میں نماز پڑھنے حرم جاتا(جیسی بھی پڑھ پاتا)، ایک طواف(کعبہ کا چکر) روزانہ کرتا، اور اوپر روم میں جاکر بیٹھ جاتا، سارا سارا دن اور رات کااکثرحصہ حرم کودیکھتا رہتا، حرم کی الگ شان، میں بیان نہیں کرسکتا کہ وہ شب و روز میرے کیسے گزرے۔

احمد اوّاہ:اس کے بعد ہندوستان آکر آپ نے کیا محسوس کیا؟
اسعد عمر:وہاں رہ کر ڈاکٹر صاحب نے مجھے میں ایک نوجوان مولانا صاحب کا نظم کردیاتھا، انہوں نے مجھے دین کی بنیادی باتیں بتائیں اور نماز یاد کرائی، اور پڑھنا سکھائی، الحمد للہ میں پابندی سے پانچ وقت کی نماز، اور تہجد کی آٹھ رکعت پڑھ رہا ہوں۔

احمد اوّاہ:آپ کے گھر والوں کو نماز پڑھنے پر اعتراض نہیں ہے؟
اسعد عمر:میری بیوی جو ڈاکٹر صاحب کی بہت فین ہے، اس کو میں نے ابھی تک نہیں بتایا ہے کہ میں مسلمان ہوگیا ہوں، اس مہینہ حضرت نے مجھے ایک مولانا کا نمبر دیا ہے، ان کو ڈاکٹر صاحب کے ساتھ لے کر اپنی بیوی کو کلمہ پڑھوانے کا ارادہ ہے، مجھے امید ہے کہ وہ میرے ساتھ نماز پڑھیں گی اور انہیں بھی شانتی محسوس ہوگی۔ انشاء اللہ وہ کلمہ پڑھنے میں دیر نہیں کریں گی۔

احمد اوّاہ:ابی(کلیم صاحب) بتا رہے تھے کہ پہلے ڈاکٹر صاحب خود بھی نماز روزہ کے پابند نہیں تھے؟
اسعد عمر:ڈاکٹر صاحب واقعی نماز روزہ سے دور تھے، اور دین سے ان کی دوری کی اس سے زیادہ اور کیا بات ہوسکتی ہے کہ انہوں نے مجھے حرم لے جانے کے لئے ایک باربھی نہیں کہا، کہ وہاں جانے کے لئے مسلمان ہونا ضروری ہے، چلو اوپر سے ہی کلمہ تو پڑھ لو(اور وہاں رمضان میں پانی پلادیا)، ڈاکٹر صاحب کا خاندانی تعلق سید گھرانہ سے ہے، وہ کیرکٹر کے لحاظ سے بہت اونچی سطح کے انسان ہیں، جب میں نماز پڑھنے لگااور نماز میں مجھے جو مزا آتا ہے اس کو ڈاکٹر صاحب سے میں نے شیئر کیا، تو اللہ کاشکر ہے کہ وہ بھی پانچ وقت کی نماز اور تہد کی پابندی کرنے لگے۔

احمد اوّاہ: ابی (کلیم صاحب) بتا رہے تھے کہ اس کے بعد ڈاکٹر صاحب بھی دعوت(اسلام سے تعارف،واقف کرانے) سے لگ گئے؟
اسعد عمر:مجھے کلمہ پڑھوایا تو انہیں خیال ہواکہ اس طرح تو بہت سے لوگ مسلمان ہوسکتے ہیں، اس کے بعد جو مریض ان کے پاس آتا اس کو کلمہ پڑھواتے تھے، میرے بعد ڈاکٹر صاحب نے کئی لوگوں کو کلمہ پڑھوایا، ان میں سے کئی لوگ ایسے مسلمان بنے کہ ان کے حالات دیکھ کر صحابہ(رسول کے ساتھی) کی یاد تازہ ہوتی ہے، پھر ڈاکٹر صاحب کو خیال ہواکہ جب یہی کام کرنا ہے تو سیکھ کر کام کروں، ان کے ایک سالے کھتولی، ضلع مظفرنگر کے رہنے والے ہیں،انہوں نے حضرت کا تعارف کرایا، حضرت سے وہ مدینہ میں ملے، پھر ممبئی میں گھر آنے کو کہا، اور الحمد للہ اب ڈاکٹر صاحب جسمانی، بانجھ پن اور پوشیدہ اِمراض کے ڈاکٹر ہونے سے زیادہ روح کے ڈاکٹر یعنی فل ٹائم داعی(اسلام سے تعارف،واقف کرانے والے)   بن گئے ہیں۔ انہوں نے حضرت سے ۳۲/ ایسے لوگوں کو بیعت کرایا جو سب تاجر(کاروباری)ہیں، اورایک سال کے اندر اللہ نے ان کو ڈاکٹر صاحب کے ذریعہ ہدایت عطا فرمائی ہے۔



احمد اوّاہ:اب آپ کا آئندہ کیا پروگرام ہے؟
اسعد عمر:رمضان المبارک میں اس سال اپنی بیوی کے ساتھ اگر انہوں نے کلمہ پڑھ لیاتو حرم میں رمضان گزارنے کا ارادہ ہے، اللہ سے پوری امید ہے وہ ضرور انہیں ہدایت دے گا۔ حرم کے رمضان کی بات ہی کچھ اور ہے، ایسا لگتا ہے کہ جنت اس زمین پر اتر آئی ہے، حضرت نے بتایاکہ رمضان ہدایت کے نصاب قرآن مجید کے نزول کا سیزن ہے، اور ہدایت کے جشن کا مہینہ ہے،اور کعبہ کے بارے میں قرآن نے کہا ہے کہ وہ عالموں کے لئے ہدایت ہے، (ہدی للعالمین) مولانا احمد میں اپنی بات بتاؤں مکہ آکر رمضان کا مہینہ کسی ایسی جگہ آئے کہ جہاں پر کسی کو پتہ نہ چلے کہ رمضان آئے کہ نہیں، تو میں بہت تو توبہ کرکے کہہ رہاہوں کہ میں گارنٹی سے رمضان کی نورانیت اور ہدایت کو انتر آتما یعنی اپنی اندرونی روح سے محسوس کرکے بتادوں گاکہ رمضان کی نورانیت اور ہدایت کا مہینہ شروع ہوگیاہے، اور اگر میری آنکھوں پر پٹی باندھ کر مجھے گھومتے گھماتے بغیر بتائے حرم شریف میں لے جایا جائے تو میں ایک ہزار پرسینٹ گارنٹی کے ساتھ سوبارتوبہ توبہ کرکے کہتا ہوں کہ میں اپنے اندر کی آنکھوں سے رب کا نور، حرم کا نور وہاں کے عالمی ہدایت کے ماحول کو محسوس کرکے شرط لگا کر بتا دوں گا کہ مجھے حرم میں داخل کردیا گیا ہے۔
میں حضرت سے بھی کہہ رہا تھاکہ رمضان اور حرم میں جتنا دعوت اور ہدایت کے لئے ماحول سازگار ہوتا ہے اتنا دوسرے دنوں اور مقام پر اس کا ہزارواں حصہ بھی نہیں ہوتا،اس لئے ماہ مبارک میں دعوت کے اسپیشل پلان بنانے چاہئے اور حرم کی تقاضوں کو بھی دعوت کے لئے خصوصی طورپر استعمال کرنا چاہئے۔

احمد اوّاہ: واقعی آپ نے بہت اہم نکتہ کی طرف توجہ دلائی،شہر رمضان الدی انزل فیہ القرآن ہدی للناس و بینات من الہدی والفرقان۔ قرآن مجید کا ایک اچھوتا پہلو ہے، اس پر عام طور پر داعی حضرات بھی توجہ نہیں کرتے اور ہم سبھی لوگ رمضان المبارک کے ہدایت اور دعوت کے سیزن میں زیادہ اسلام کی دعوت کی مارکیٹنگ کرنے کے بجائے، روزہ میں کیسے یہ کام ہوگا وہ کام ہوگا سوچتے ہیں۔ دوسری عبادات میں لگ جاتے ہیں، ایسے ہی حرم کے ہدی للعالمین کے پہلو سے کماحقہ فائدہ نہیں اٹھایا جاتا۔ جزا کم اللہ آپ نے اہم پہلو کی طرف توجہ دلائی؟

اسعد عمر:آپ کی محبت ہے جو ایسا سمجھتے ہیں ورنہ میں کیا ہوں۔
احمد اوّاہ:قارئین ارمغان(ماہنامہ) کے لئے آپ کوئی پیغام دیں گے؟

اسعد عمر:بس میں تو یہی کہوں گا کہ میں ایک خاندانی تاجر ہوں، ہم لوگ ہر چیز کو بیوپاری ذہنیت سے دیکھتے ہیں، اس مبارک ہدایت اور دعوت کے سیزن میں اسلام کی مارکیٹنگ اور دعوت کو بڑے پیمانہ پر کرنا چاہئے کہ ہدایت کی راہ میں رکاوٹ پیدا کرنے والے شیاطین بھی قید کرلئے جاتے ہیں، اور ہدایت دعوت کی منڈی اور بازار حرم(کعبہ) ہے۔ جس کے بارے میں خود ہدایت دینے والے مالک نے ہدی للعالمین کی خبر دی ہے، اس بازار میں تھوک میں ہدایت لینے اور وہاں سے آنے والے رٹیل بیوپاریوں کو ڈسٹری بیوٹر بنانے کے لئے ایک مضبوط پروگرام بنانا چاہئے۔
احمد اوّاہ:ماشاء اللہ بہت خوب، جزاکم اللہ بہت بہت شکریہ۔

اسعد عمر:شکریہ تو آپ کا کہ ماہ مبارک میں مجھے اس کارخیر میں شریک کیا، آپ سے اور ارمغان کے تمام قارئین سے میرے سارے پریوار اور پوری انسانیت کے لئے خصوصاً اس ماہ مبارک میں دعا کی درخواست کی جاتی ہے۔