indian top class businessman family member New Muslim Asad Umar interview roman Urdu/hindi

ahamad awwah : assalaamu alaikum nav muslim asad umar :vaalaikum assalaam ahamad awwah : asad umar saahib abee ( waalid kaleem saahib ) ne bataaya ki aap delhi aaye hue hain, ittifaaq kee baat hai ki mein bhee ek din ke lie phulat , zila muzaffar nagar se aaya tha, shaayad aapase bhee abee ne bataaya hoga ki hamaare yahaan phulat ( madarasa ) se ek daavatee maigazeen ” aramoogaan “ ke naam se nikalatee hai, is ke liye aapase kuchh baaten karana chaahata hoon
asad umar :jee haan, hazarat ne mujhe bataaya tha, pahale to mera khyaal thaaki mere masail kuchh hal ho jaen to hee mein kuchh baaten karoon, magar hazarat ne faramaaya ki ramazaan ka maheena hai aur is maah mein har nekee ka ajr-o-savaab sattar guna ho jaata hai, aur mere rab ne mujhe hidaayat dee hai, hazarat ne kaha ki intaravyoo shaaye karane ka maqasad logon mein deenee khusoosan daavatee spirit paida karana hota hai, to is maheena mein meree baaten aur kaar-guzaaree padh kar kuchh bandon ko nekee khusoosan daavat( islaam se vaaqif karaana )jo sabase bade nekee hai, karane kee taufeeq hogee to doosare maheenon ke muqaabale mein sattar guna ajr-o-savaab milega, phir ye bhee hai ki maut ka ek lamha itameenaan nahin, na maaloom aainda mujhe ye baaten sunaane kee mohalat bhee milegee ya nahin? aap shauq se jo chaahen mujhase savaal karen


ahamad awwah : doctor raahat aapake saath mumbee se aae hue hain aapaka unase kitane dinon se taalluq hai, aur ye dostee aur taalluq kis tarah hua, mujhe mahasoos ho raha hai bilakul haqeeqee bhaeeyon kee tarah aap ek doosare se baaten karate rahe hain
asad umar : doctor saahib se mera taalluq taqareeban saat saal puraana hai.asal mein daaktar saahib ek sayyad gharaana se taalluq rakhate hain, aur shaayad hazarat ne bataaya bhee hoga ki sahaaranapoor ke rahane vaale hain aur shaayad hazarat se unakee door kee kaee rishtedaareeyaan hain, daaktar saahib ne sahaaranapoor se ek maideekal diploma kors kiya tha un ko apanee khaanadaanee kitaabon se baanjhapan aur amaraaz posheeda ( gupt rog )ke bahut kaamayaab nuskhe haath lag gae hain aur vo in donon beemaareeyon ka eelaaj karate hain, eelaaj ke dauraan unhonne ye bhee mahasoos kiya ki miyaan beevee ke azadavaajee taalluqaat aur baar-baar hamal ke girane mein jaadoo aur jinnaat ka bhee asar hota hai, ki aadamee tandarust hai aur beevee ke paas pahuncha to goya bilakul beemaar hai, aur kisee kaam ka nahin, aisa ho jaata hai, to us ke lie unhonne bahut se aamilon se amaleeyaat seekhe, unako tren mein ek faqeer mila aur usane unako jaadoo aur sahr ke eelaaj ke lie amaleeyaat kee ijaazat dee aur daaktar saahib ne eelaaj shuroo kar diya, hamaaree shaadee ko bhee 1 5 /saal ho gae the, hamaare yahaan maalik ne koee khushee nahin dee,aur mere saath kuchh jaadoo ka bhee muaamala tha, mujhe aur meree beevee ko shak thaaki meree ek bhaabhee jo apanee ek bhateejee se meree shaadee karaana chaahatee thee usane ham par jaadoo kiya tha, mere ek byopaaree dost ne jisaka daaktar raahat saahib ne eelaaj kiya tha, unake haan alahamadu lillaah daaktar saahib ke eelaaj se teen aulaad huee theen, mujhe daaktar saahib se milane ka mashvara diya, daaktar saahib ko dekhakar mera zara dil khataka ki chalo beemaaree ka eelaaj to ye kar sakate hain magar paint boo shart bagair daadhee ke angrez dikhane vaale ye saahib jhaad phoonk ka eelaaj kaise karenge, koee soofee sant hee is ka eelaaj kar sakata hai, magar choonki mere dost ka eelaaj unhonne kiya tha aur faayada hua tha is lie mainne unase eelaaj karaaya, maalik ka karana hua ki ab se paanch saal pahale mere yahaan ek betee aur do saal baad ek beta hua, aur hamaaree daaktar saahib kee dostee ho gaee, aur mein aur meree beevee hee nahin meree sasuraal aur gharavaale daaktar saahib ke ek tarah se gulaam ho gae, aur hamaare ghar mein har kaam daaktar saahib ke mashvara se hone laga, rafta-rafta ye taalluq dostee mein badal gaya, maalik ne mujhe bahut kuchh diya hai, mainne daaktar saahib ko ek flait gipht karane ko kaha to daaktar saahib ne saaf mana kar diya aur bole meree apanee kamaee kee jhompadee mere lie kisee raees kee ehasaanamandee mein haasil kie gae mahal se bada mahal hai, aur shaayad daaktar saahib se hamaaree dostee se zyaada mazaboot yahee belaus taalluq tha, yahaan tak ki daaktar saahib eelaaj ke lie jo dava dete the, unhonne us ke bhee paise talab nahin kie aur na tai kie aur jab mainne dene chaahe to bhee maamoolee raqam jo bahut hee kam hotee thee so do sau lekar vaapis kar diye
Aapki Amanat Aapki Sewa Mein Hindi - Urdu 
(good sound,  micro Lady voice )
https://youtu.be/ZOp2xxs-kMo





ahamad awwah : aap zara apana taaaruf to karaeee asad umar : abhee apana poora taaaruf karaane ke haal mein nahin hoon bas itana kaafee hai ki hindostaan ke sabase bade taajir khaanadaan, jisaka aajakal mulk par raaj chal raha hai usee taajir khaanadaan se taalluq rakhata hoon, maalik ka karam ye hai ki usane dhanda ke lihaaz se khoob se bhee zyaada navaaza hai, asalan ham gujaraatee hain aur malik ke bahut se soobon mein hamaare khaanadaan ka kaarobaar hai ahamad awwah : kya abhee aapake qabool islaam ka logon ko ilam nahin hua, yaanee khaanadaan vaalon ko asad umar : abhee mainne aam ailaan nahin kiya hai, inshaallaah khaanadaan ke kuchh logon par kaam chal raha hai, ab to hazarat ke mashvara se jab kahenge ailaan vagaira sab karenge ahamad avvaah : apane qabool islaam ke baare mein zara bataeee asad umar :shaadee ke das saal aulaad na hone kee vajah se ham donon miyaan beevee bahut pareshaan the, aur mujhase zyaada meree beevee pareshaan thee, khaanadaan vaale sab us ko taana dete the, aulaad kee havas mein, darabadar maare maare phirate the, aur jo koee bataata, daan pune sab kuchh karate the, mandiron, aashramon, gurooduvaaron aur daragaahon mein jaakar maatha tekate aur aasheervaad lene kee koshish karate, mumbee mein haajee alee kee daragaah bahut mashahoor hai, is ke baare mein suna tha. haajee alee ke yahaan se be aulaadon ko aulaad mil jaatee hai, vahaan bhee baar-baar jaate, vahaan bhee kuchh hua nahin, ek-baar ham haajee alee kee daragaah gae to ek baaba ne kaha haajee alee ke naam par teen roze ( barat ) har maheene rakhoo, aulaad mil jaegee,us ke baad daaktar saahib hamaaree mulaaqaat ho gaee, hamane daaktar saahib se kaha ki main aur meree beevee ne haajee alee ke naam ke teen barat maan rakhe hain, ham kya karen, daaktar raahat ne kaha ki haajee alee kee daragaah par agar makkhee prasaad uthaakar le jaatee hai to vo use chheen nahin sakate, ye sab bande hain aulaad dena na dena sirph ek maalik ke qabaze mein hai, jo haajee alee ka bhee khuda hai aur hamaara aur aap ka bhee, agar aapako rakhana hee hai to aap is maalik ke lie aur isee ke naam ka barat rakhoo, aur achchha hai ki agala maheena ramazaan ka hai aap barat ke bajaay teen teen roze donon rakhakar is se aulaad dene kee dua karo, hamen choonki bayopaaree dost ne bataaya tha ki daaktar saahib ke eelaaj ke baad hamaare ghar mein khushee aaee hai, hamane daaktar saahib ke mashvara se ramazaan ke teen roze rakhe, roza rakhane ka tareeqa daaktar saahib se maaloom kiya aur khoob ro ro kar oopar vaale maalik se god bharane kee dua kee, davaon ka eelaaj aur daaktar saahib se jhaad phoonk ka bhee chal raha tha, eed ke baad ledee daaktar se chaik karaaya to unhonne khushee kee ummeed dilaee aur agale maheena aur baat pakkee ho gaee, maalik ka karam hai ki usane ek betee de dee, aur is ke do saal baad ek beta bhee de diya, doosaree baat ye huee ki jab mainne aur meree beevee ne roza rakha to ham donon ko bhookh aur pyaas lagee, tab ham donon e see chalaakar bhookh pyaas kam karane ke lie dopahar baad so gae, ittifaaq kee baat mainne aur meree beevee donon ne khaab dekha ki ham donon makka mein hain,aur donon safaid chaadaron mein kaaba ka chakkar laga rahe hain aur hamen vahaan chakkar lagaane mein ajeeb shaanti aur maza aa raha hai, is ke baad mainne intaranait par harm ke chainal par makka aur madeena ko baar-baar dekha, aur mujhe kaaba dekhane ka behad shauq ho gaya, daaktar raahat se hamaaree dostee ho gaee thee, aur ghar aur kaarobaar ka har kaam mein daaktar saahib ke mashvara se karata tha, is lie main unase baar-baar kahata thaaki mujhe makka jaane ka bahut shauq ho raha hai, aap mujhe maalik ka vo ghar ek baar dikha den, daaktar saahib mujhe ummeed dilaate rahe aur kahate rahe ki main zaroor aapako khud vahaan lekar jaoonga, daaktar saahib kaee deshon mein eelaaj ke lie jaate the aur mujh pata laga ki kaee mulkon ka green kaard unake paas hai, aur vahaan unhonne ghar bhee bana rakha hai, taiph saoodee arab mein bhee daaktar saahib ka ek apana makaan hai jo kisee shekh ke naam daaktar saahib ne apane paise se khareed rakha hai ek saal pahale daaktar saahib ne mujhase kaha ki ramazaan aane vaale hain, ramazaan mein makka madeena jaane ka alag hee maza hai, vahaan badee raunak hotee hai, aapako ramazaan mein lekar chaloonga, ramazaan mein jaana zara mahanga hota hai, mainne daaktar saahib se kaha sasta mahanga aap kyon dekhate hain, maalik ne hamen kisee cheez kee kamee nahin rakhee hai, aapaka aur mera donon ka kharch mere zimma hoga, mujhe bata deejie aapaka bizanas klaas mein tikat banava leta hoon, daaktar saahib ne kaha aapake tikat se bizanas klaas mein jaane ke muqaabala mein mere lie paidal vahaan jaana zyaada khushee kee baat hogee, aap apana tikat banavaayen, main khud apana tikat banava loon ga


ahamad avvaah : daaktar saahib kee badee baat asad umar : asal mein daaktar saahib vaaqee bahut oonche darja ke insaan hain, unake muaamalaat se mujhe laga ki vo bade aala darja ke sayyad hain, laalach aur lubhao unake paas ko bhee nahin phatakata, shaayad unakee is sifat ne hee mujhe muslamaanon aur islaam ka gulaam bana diya ahamad avvaah : jee to phir kiya hua asad umar : daaktar saahib ne kisee ejaint se mera umara ka veeza lagava diya ahamad avvaah : aapaka paasaport to hindoo naam se hoga, umara ( kaaba dekhane ka safar ) ka veeza kaise laga, kya qabool islaam ka koee sarteefiket banavaaya tha asad umar:daaktar saahib ne na mujhase kaha ki vahaan jaane ke lie muslamaan hona zarooree hai, aur na koee sarateefeekat banavaaya, daaktar saahib ne bataaya ki jaanane vaale ejaint the, aur sifaarat khaana mein achchha rasookh tha bas unase hee kah diya ki naam aisa hai, asal mein ye muslamaan hain, jhoot hee daaktar saahib ne kah diya, guzashta saal chauthe roza ko ham log mumbee se jadda pahunche, eyaraport se utarakar daaktar saahib ne kaha aapako kaaba main khud apanee gaadee se lekar chaloonga, unakee gaadee jadda mein khadee thee, jo kisee dost ko fon karake unhonne mangava lee thee, unhonne kaha ki aapako ek naatak karana padega. mainne poochha kya, bole nahaakar aapako eharaam ek chaadar safaid oopar aur safaid lungee pahananee padegee, mainne nahaakar jaise daaktar saahib ne kaha eharaam baandh liya, dopahar ek baje ke aas-paas hamane apanee gaadee kisee paarking mein makka se baahar lagaakar rokee aur bason se harm pahunche, jaise hee mein harm mein daakhil hua, mere hosh kharaab ho gae, mujhe aisa laga ki main kisee andher nagaree se roshan duniya mein aagaya hoon, main vo kaifeeyat na kabhee bhool sakata hoon aur na lafzon mein bata sakata hoon, mainne kaaba ko dekha to na jaane mujhe kya mil gaya, mainne daaktar raahat saahib se kaha kya main maalik ke is ghurako chhoo sakata hoon? dopahar mein roza kee vajah se zara bheed kam thee daaktar saahib ne kaha sab log parda pakad kar dua maang rahe hain aapako kaun rok raha hai, shauq se jaeee, mainne kaaba ko jaise hee haath lagaaya, na jaane mainne kiya pa liya, mujhe rona shuroo ho gaya aur phoot phootakar bachcha kee tarah rone ko dil hua aur der tak rota raha, daaktar saahib mujhe dekha to zamazam lekar aae, asal mein kuchh roz se mujhe dil kee takaleef bhee shuroo ho gaee thee, vo dar gae ki kuchh na ho jaegee, daaktar saahib ne mujhe zamazam pilaaya, mainne unase rote hue kaha, mainne bahut galat kya, mujhe is paak ghar mein aana nahin chaaheee tha, mein to apavitr (naapaak) hoon, daaktar saahib ne kaha apavitr kahaan ho tum, tumane yahaan aakar paak eharaam baandha hai, mainne kaha ye aatma (rooh) to naapaak hai, mujhe vo kalima padhavao jo aatma ko pavitr ( paak ) karata hai, daaktar saahib ne mujhe jaldee jaldee bataaya ki ye kalima hai : ‘‘ashahadu allailaah illallaahu va ashahadu ann muhammadan abduhoo va rasooluhoo’’ ‘‘main gavaahee deta hoon is baat kee ki allaah ke siva koee upaasana yogy nahin (vah akela hai usaka koee saajhee nahin) aur main gavaahee deta hoon ki muhammad allaah ke bande aur usake rasool (doot) hain’’. mainne kaha daaktar saahib aise dil se nahin , mujhe antar aatma( andar dil ) se padhavao, unhonne mujhe kalima padhavaaya, daaktar saahib se kah kar ham logon ne daaraalatoheed jo harm ke baraabar ek phaeev staar bada hotal hai, is ke kaaba vev sveet (jahaan se kaaba dikhaee deta hai ) do roz ke lie buk karaaye, aur ghar fon kar diya ki mujhe kaafee dinon se dil kee takaleef ho rahee thee, yahaan par ek dil ka daaktar mil gaya hai, main eelaaj karaake aaoonga ahamad avvaah : maasha allaah us ke baad aap do roz tak vaheen rahe asad umar :jee, ye do roz kaise guzar gae mein bayaan nahin kar sakata, ramazaan ul-mubaarak kee raunak aur harm kee nooraaniyat aur sukoon shaanti, bas mein namaaz padhane harm jaata( jaisee bhee padh paata ) ، ek tavaaf ( kaaba ka chakkar ) rozaana karata, aur oopar rum mein ja kar baith jaata, saara saara din aur raat ka aksar hissa harm ko dekhata rahata, harm kee alag shaan, mein bayaan nahin kar sakata ki vo shab-o-roz mere kaise guzare ahamad avvaah : is ke baad hindostaan aakar aapane kya mahasoos kiya asad umar : vahaan rah kar daaktar saahib ne mujhe mein ek naujavaan maulaana saahib ka nazam kar diya tha, unhonne mujhe deen kee buniyaadee baaten bataen aur namaaz yaad karaee, aur padhana sikhaee, alahamadu lillaah mein paabandee se paanch vaqt kee namaaz, aur tahajjud kee aath rakaat padh raha hoon ahamad avvaah : aapake ghar vaalon ko namaaz padhane par etaraaz nahin hai asad umar : meree beevee jo daaktar saahib kee bahut fain hai, us ko mainne abhee tak nahin bataaya hai ki main muslamaan ho gaya hoon, is maheena hazarat ne mujhe ek maulaana ka nambar diya hai, unako daaktar saahib ke saath lekar apanee beevee ko kalima padhavaane ka iraada hai, mujhe ummeed hai ki vo mere saath namaaz padhengee aur unhen bhee shaanti mahasoos hogee. inshaallaah vo kalima padhane mein der nahin karengee ahamad avvaah : abee ( kaleem saahib ) bata rahe the ki pahale daaktar saahib khud bhee namaaz roza ke paaband nahin the asad umar : daaktar saahib vaaqee namaaz roza se door the, aur deen se unakee dooree kee is se zyaada aur kya baat ho sakatee hai ki unhonne mujhe harm le jaane ke lie ek baar bhee nahin kaha, ki vahaan jaane ke lie muslamaan hona zarooree hai, chalo oopar se hee kalima to padh loo ( aur vahaan ramazaan mein paanee pila diya ) ، daaktar saahib ka khaanadaanee taalluq sayyad gharaana se hai, vo kairaktar ke lihaaz se bahut oonchee satah ke insaan hain, jab main namaaz padhane laga aur namaaz mein mujhe jo maza aata hai is ko daaktar saahib se mainne sheyar kiya, to allaah ka shukr hai ki vo bhee paanch vaqt kee namaaz aur tahajjud kee paabandee karane lage ahamad avvaah : abee ( kaleem saahib ) bata rahe the ki is ke baad daaktar saahib bhee daavat (islaam se taaaruf,vaaqif karaane ) se lag gae asad umar : mujhe kalima padhavaaya to unhen khyaal hua ki is tarah to bahut se log muslamaan ho sakate hain, us ke baad jo mareez unake paas aata us ko kalima padhavaate the, mere baad daaktar saahib ne kaee logon ko kalima padhavaaya, unamen se kaee log aise muslamaan bane ki unake haalaat dekhakar sahaaba ( rasool ke saathee ) kee yaad taaza hotee hai, phir daaktar saahib ko khyaal hua ki jab yahee kaam karana hai to seekh kar kaam karoon, unake ek saale khataulee, zila muzaffaranagar ke rahane vaale hain,unhonne hazarat ka taaaruf kiraaya, hazarat se vo madeena mein mile, phir mumbee mein ghar aane ko kaha, aur alahamadu lillaah ab daaktar saahib jismaanee, baanjhapan aur posheeda amaraaz ke daaktar hone se zyaada rooh ke daaktar yaanee ful taim daee ( islaam se taaaruf,vaaqif karaane vaale ) ban gae hain. unhonne hazarat se 3 2 / aise logon ko baiat kiraaya jo sab taajir (kaarobaaree ) hain, aur ek saal ke andar allaah ne unako daaktar saahib ke zareeya hidaayat ata faramaee hai

ahamad awwah : ab aapaka aainda qya prograam hai
asad umar :ramazaan ul-mubaarak mein is saal apanee beevee ke saath agar unhonne kalima padh liya to harm mein ramazaan guzaarane ka iraada hai, allaah se pooree ummeed hai vo zaroor unhen hidaayat dega. harm ke ramazaan kee baat hee kuchh aur hai, aisa lagata hai ki jannat is zameen par utar aaee hai, hazarat ne bataaya ki ramazaan hidaayat ke nisaab quraan-e-majeed ke nuzool ka seezan hai, aur hidaayat ke jashn ka maheena hai,aur kaaba ke baare mein quraan ne kaha hai ki vo aalimon ke lie hidaayat hai( hudal lil aalameen ) maulaana ahamad mein apanee baat bataoon makka aakar ramazaan ka maheena kisee aisee jagah aae ki jahaan par kisee ko pata na chale ki ramazaan aae ki nahin, to main bahut tauba tauba karake kah raha hoon ki main gaarantee se ramazaan kee nooraaniyat aur hidaayat ko antar aatma yaanee apanee andaroonee rooh se mahasoos karake bataadoon ga ki ramazaan kee nooraaniyat aur hidaayat ka maheena shuroo ho gaya hai, aur agar meree aankhon par pattee baandh kar mujhe ghoomate ghumaate bagair batae harm shareef mein le jaaya jaaye to mein ek hazaar parasent gaarantee ke saath sau baar tauba tauba karake kahata hoon ki main apane andar kee aankhon se rab ka noor, harm ka noor vahaan ke aalamee hidaayat ke maahaul ko mahasoos karake shart laga kar bata doonga ki mujhe harm mein daakhil kar diya gaya hai main hazarat se bhee kah raha tha ki ramazaan aur harm mein jitana daavat aur hidaayat ke lie maahaul saazagaar hota hai utana doosare dinon aur muqaam par is ka hazaaravaan hissa bhee nahin hota, is lie maah-e-mubaarak mein daavat ke spaishal plaan banaane chaaheee aur harm kee taqaazon ko bhee daavat ke lie khusoosee taur par istimaal karana chaaheee ahamad avvaah :vaaqee aapane bahut aham nukta kee taraf tavajja dilaee, .... quraan-e-majeed ka ek achhoota pahaloo hai, is par aam taur par daee hazaraat bhee tavajja nahin karate aur ham sabhee log ramazaan ul-mubaarak ke hidaayat aur daavat ke seezan mein zyaada islaam kee daavat kee maarketing karane ke bajaay, roza mein kaise ye kaam hoga vo kaam hoga sochate hain. doosaree ibaadaat mein lag jaate hain, aise hee harm ke hudal lil aalameen ke pahaloo se kamaahaqa faayada nahin uthaaya jaata. jaza kam allaah aapane aham pahaloo kee taraf tavajja dilaee asad umar : aapakee muhabbat hai jo aisa samajhate hain varna mein kya hoon ahamad avvaah : qaareen aramoogaan ( maahanaama ) ke lie aap koee paigaam denge asad umar : bas mein to yahee kahoonga ki mein ek khaanadaanee taajir hoon, ham log har cheez ko bayoporee zahaneeyat se dekhate hain, is mubaarak hidaayat aur daavat ke seezan mein islaam kee maarketing aur daavat ko bade paimaana par karana chaaheee ki hidaayat kee raah mein rukaavat paida karane vaale shayaateen bhee qaid karalie jaate hain, aur hidaayat daavat kee mandee aur baazaar harm ( kaaba ) hai. jisake baare mein khud hidaayat dene vaale maalik ne hudal lil aalameen kee khabar dee hai, is baazaar mein thok mein hidaayat lene aur vahaan se aane vaale ritel bayoporiyon ko distareebyootar banaane ke lie ek mazaboot prograam banaana chaaheee ahamad avvaah : maasha allaah bahut khoob, jazaakam allaah bahut bahut shukriya asad umar :shukriya to aapaka ki maah-e-mubaarak mein mujhe is kaar-e-khair mein shareek kiya, aapase aur aramoogaan ke tamaam qaareen se mere saare parivaar aur pooree insaaniyat ke lie khusoosan is maah-e-mubaarak mein dua kee darakhaast kee jaatee hai assalaamu alaikum
----
Nau Muslim shamim bhai (Shyam sundarQ) se ek mulaqat




indian top class businessman family نو مسلم اسعد عمر صاحب interview

 armughan.net احمد اوّاہ: السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ 
اسعد عمر: وعلیکم السلام و رحمۃ اللہ و برکاتہ
احمد اوّاہ َ: اسعد عمر صاحب ابی (والدکلیم صاحب) نے بتایاکہ آپ دہلی آئے ہوئے ہیں، اتفاق کی بات ہے کہ میں بھی ایک دن کے لئے پھلت، ضلع مظفر نگر سے آیا تھا، شاید آپ سے بھی ابی نے بتایا ہوگاکہ ہمارے یہاں پھُلت(مدرسہ) سے ایک دعوتی میگزین ”ارمغان“ کے نام سے نکلتی ہے، اس کے لئے آپ سے کچھ باتیں کرنا چاہتا ہوں۔
اسعد عمر:جی ہاں، حضرت نے مجھے بتایا تھا، پہلے تو میرا خیال تھاکہ میرے مسائل کچھ حل ہوجائیں تو ہی میں کچھ باتیں کروں، مگر حضرت نے فرمایاکہ رمضان کا مہینہ ہے اور اس ماہ میں ہر نیکی کا اجر و ثواب ستر گنا ہوجاتا ہے، او ر میرے رب نے مجھے ہدایت دی ہے، حضرت نے کہاکہ انٹرویو شائع کرنے کامقصد لوگوں میں دینی خصوصاً دعوتی اِسپرِٹ پیدا کرنا ہوتا ہے، تو اس مہینہ میں میری باتیں اور کارگزاری پڑھ کر کچھ بندوں کو نیکی خصوصاً دعوت(اسلام سے واقف کرانا) جو سب سے بڑے نیکی ہے، کرنے کی توفیق ہوگی تو دوسرے مہینوں کے مقابلہ میں ستر گنااجر و ثواب ملے گا، پھر یہ بھی ہے کہ موت کاایک لمحہ اطمینان نہیں، نہ معلوم آئندہ مجھے یہ باتیں سنانے کی مہلت بھی ملے گی یا نہیں؟ آپ شوق سے جو چاہیں مجھ سے سوال کریں۔



احمد اوّاہ:ڈاکٹر راحت آپ کے ساتھ ممبئی سے آئے ہوئے ہیں آپ کا ان سے کتنے دنوں سے تعلق ہے،او ریہ دوستی اور تعلق کس طرح ہوا، مجھے محسوس ہورہاہے بالکل حقیقی بھائیوں کی طرح آپ ایک دوسرے سے باتیں کرتے رہے ہیں؟
اسعد عمر:ڈاکٹر صاحب سے میرا تعلق تقریباً سات سال پرانا ہے۔اصل میں ڈاکٹر صاحب ایک سید گھرانہ سے تعلق رکھتے ہیں، اور شاید حضرت نے بتایا بھی ہوگاکہ سہارن پور کے رہنے والے ہیں اور شاید حضرت سے ان کی دور کی کئی رشتہ داریاں ہیں، ڈاکٹر صاحب نے سہارن پور سے ایک میڈیکل ڈپلوما کورس کیا تھاان کو اپنی خاندانی کتابوں سے بانجھ پن اور امراض پوشیدہ(گُپت روگ) کے بہت کامیاب نسخے ہاتھ لگ گئے ہیں اور وہ ان دونوں بیماریوں کا علاج کرتے ہیں، علاج کے دوران انہوں نے یہ بھی محسوس کیاکہ میاں بیوی کے ازدواجی تعلقات اور باربار حمل کے گرنے میں جادو اور جنّات کا بھی اثر ہوتاہے، کہ آدمی تندرست ہے اور بیوی کے پاس پہنچا تو گویا بالکل بیمار ہے، اور کسی کام کا نہیں، ایسا ہوجاتا ہے، تو اس کے لئے انہوں نے بہت سے عاملوں سے عملیات سیکھے، ان کو ٹرین میں ایک فقیر ملااور اس نے ان کو جادو اور سحر کے علاج کے لئے عملیات کی اجازت دی اور ڈاکٹر صاحب نے علاج شروع کردیا، ہماری شادی کو بھی ۱۵/ سال ہوگئے تھے، ہمارے یہاں مالک نے کوئی خوشی نہیں دی،اور میرے ساتھ کچھ جادو کا بھی معاملہ تھا، مجھے اور میری بیوی کو شک تھاکہ میری ایک بھابھی جو اپنی ایک بھتیجی سے میری شادی کرانا چاہتی تھی اس نے ہم پر جادو کیا تھا، میرے ایک بیوپاری دوست نے جس کا ڈاکٹر راحت صاحب نے علاج کیاتھا، ان کے ہاں الحمد للہ ڈاکٹر صاحب کے علاج سے تین اولاد ہوئی تھیں، مجھے ڈاکٹر صاحب سے ملنے کا مشورہ دیا، ڈاکٹر صاحب کو دیکھ کر میرا ذرا دل کھٹکاکہ چلو بیماری کا علاج تو یہ کرسکتے ہیں مگر پینٹ بو شرٹ بغیر داڑھی کے انگریز دکھنے والے یہ صاحب جھاڑ پھونک کا علاج کیسے کریں گے، کوئی صوفی سنت ہی اس کا علاج کرسکتا ہے، مگر چونکہ میرے دوست کا علاج انہوں نے کیا تھااور فائدہ ہوا تھااس لئے میں نے ان سے علاج کرایا، مالک کا کرنا ہواکہ اب سے پانچ سال پہلے میرے یہاں ایک بیٹی اور دو سال بعد ایک بیٹا ہوا، اور ہماری ڈاکٹر صاحب کی دوستی ہوگئی، اور میں اور میری بیوی ہی نہیں میری سسرال اور گھروالے ڈاکٹر صاحب کے ایک طرح سے غلام ہوگئے، اور ہمارے گھرمیں ہر کام ڈاکٹر صاحب کے مشورہ سے ہونے لگا، رفتہ رفتہ یہ تعلق دوستی میں بدل گیا، مالک نے مجھے بہت کچھ دیا ہے، میں نے ڈاکٹر صاحب کو ایک فلیٹ گفٹ کرنے کوکہاتو ڈاکٹر صاحب نے صاف منع کردیاور بولے میری اپنی کمائی کی جھونپڑی میرے لئے کسی رئیس کی احسان مندی میں حاصل کئے گئے محل سے بڑا محل ہے، اور شاید ڈاکٹر صاحب سے ہماری دوستی سے زیادہ مضبوط یہی بے لوث تعلق تھا، یہاں تک کہ ڈاکٹر صاحب علاج کے لئے جو دوا دیتے تھے، انہوں نے اس کے بھی پیسے طلب نہیں کئے اور نہ طے کئے اور جب میں نے دینے چاہے تو بھی معمولی رقم جو بہت ہی کم ہوتی تھی سو دو سو لے کر واپس کردیئے۔


Aapki Amanat Aapki Sewa Mein Hindi - Urdu 
(good sound,  micro Lady voice )
https://youtu.be/ZOp2xxs-kMo




احمد اوّاہ:آپ ذرا اپنا تعارف تو کرائیے؟
اسعد عمر:ابھی اپنا پورا تعارف کرانے کے حال میں نہیں ہوں بس اتنا کافی ہے کہ ہندوستان کے سب سے بڑے تاجر خاندان، جس کا آج کل ملک پر راج چل رہاہے اسی تاجر خاندان سے تعلق رکھتا ہوں، مالک کا کرم یہ ہے کہ اس نے دھندہ کے لحاظ سے خوب سے بھی زیادہ نوازا ہے، اصلاً ہم گجراتی ہیں اور ملک کے بہت سے صوبوں میں ہمارے خاندان کا کاروبار ہے۔
احمد اوّاہ:کیا ابھی آپ کے قبول اسلام کا لوگوں کو علم نہیں ہوا، یعنی خاندان والوں کو؟
اسعد عمر:ابھی میں نے عام اعلان نہیں کیا ہے، انشاء اللہ خاندان کے کچھ لوگوں پر کام چل رہا ہے، اب تو حضرت کے مشورہ سے جب کہیں گے اعلان وغیرہ سب کریں گے۔

احمد اوّاہ:اپنے قبول اسلام کے بارے میں ذرا بتائیے؟
اسعد عمر:شادی کے دس سال اولاد نہ ہونے کی وجہ سے ہم دونوں میاں بوی بہت پریشان تھے، اور مجھ سے زیادہ میری بیوی پریشان تھی، خاندان والے سب اُس کو طعنہ دیتے تھے، اولاد کی ہوس میں، دربدر مارے مارے پھرتے تھے، اور جو کوئی بتاتا، دان پُنے سب کچھ کرتے تھے، مندروں، آشرموں، گردوواروں اور درگاہوں میں جاکر ماتھا ٹیکتے اور آشیرواد لینے کی کوشش کرتے، ممبئی میں حاجی علی کی درگاہ بہت مشہور ہے، اس کے بارے میں سنا تھا۔ حاجی علی کی درگاہ بہت مشہور ہے، اس کے بارے میں سنا تھا حاجی علی کے یہاں سے بے اولادوں کو اولاد مل جاتی ہے، وہاں بھی باربار جاتے، وہاں بھی کچھ ہوانہیں، ایک بار ہم حاجی علی کی درگاہ گئے تو ایک بابا نے کہا حاجی علی کے نام پر تین روزے(برت) ہر مہینے رکھو، اولاد مل جائے گی،ا س کے بعد ڈاکٹر صاحب ہماری ملاقات ہوگئی، ہم نے ڈاکٹر صاحب سے کہا کہ میں اورمیری بیوی نے حاجی علی کے نام کے تین برت مان رکھے ہیں، ہم کیا کریں، ڈاکٹر راحت نے کہا کہ حاجی علی کی درگاہ پر اگرمکھی  پرساد اٹھاکر لے جاتی ہے تو وہ اسے چھین نہیں سکتے، یہ سب بندے ہیں اولاد دینا نہ دینا صرف ایک مالک کے قبضہ میں ہے، جو حاجی علی کا بھی خدا ہے اور ہمارا اور آپ کا بھی، اگر آپ کو رکھنا ہی ہے تو آپ اس مالک کے لئے اور اسی کے نام کا برت رکھو، اور اچھا ہے کہ اگلا مہینہ رمضان کا ہے آپ برت کے بجائے تین تین روزے دونوں رکھ کر اس سے اولاد دینے کی دعا کرو، ہمیں چونکہ بیوپاری دوست نے بتایا تھاکہ ڈاکٹر صاحب کے علاج کے بعد ہمارے گھر میں خوشی آئی ہے، ہم نے ڈاکٹر صاحب کے مشورہ سے رمضان کے تین روزے رکھے، روزہ رکھنے کا طریقہ ڈاکٹر صاحب سے معلوم کیااور خوب رو رو کر اوپر والے مالک سے گود بھرنے کی دعا کی، دواؤں کا علاج اور ڈاکٹر صاحب سے جھاڑ پھونک کابھی چل رہا تھا، عید کے بعد لیڈی ڈاکٹر سے چیک کرایاتو انہوں نے خوشی کی امید دلائی اور اگلے مہینہ اور بات پکی ہوگئی، مالک کا  کرم ہے کہ اس نے ایک بیٹی دے دی، اور اس کے دو سال بعد ایک بیٹا بھی دے دیا، دوسری بات یہ ہوئی کہ جب میں نے اور میری بیوی نے روزہ رکھاتو ہم دونوں کو بھوک اور پیاس لگی، توہم دونوں اے سی چلاکر بھوک پیاس کم کرنے کے لئے دوپہر بعد سوگئے، اتفاق کی بات میں نے اور میری بیوی دونوں نے خواب دیکھاکہ ہم دونوں مکہ میں ہیں،اور دونوں سفید چادروں میں کعبہ کا چکر لگا رہے ہیں اور ہمیں وہاں چکر لگانے میں عجیب شانتی اور مزا آرہا ہے، اس کے بعد میں نے انٹرنیٹ پر حرم کے چینل پر مکہ اور مدینہ کو باربار دیکھا، اور مجھے کعبہ دیکھنے کا بے حد شوق ہوگیا، ڈاکٹر راحت سے ہماری دوستی ہوگئی تھی، اور گھر اور کاروبار کا ہرکام میں ڈاکٹر صاحب کے مشورہ سے کرتا تھا، اس لئے میں ان سے باربار کہتا تھاکہ مجھے مکہ جانے کا بہت شوق ہورہاہے، آپ مجھے مالک کاوہ گھرایک بار دکھا دیں، ڈاکٹر صاحب مجھے امید دلاتے رہے اور کہتے رہے کہ میں ضرور آپ کو خود وہاں لے کر جاؤں گا، ڈاکٹر صاحب کئی دیشوں میں علاج کے لئے جاتے تھے اور مجھ پتہ لگاکہ کئی ملکوں کاگرین کارڈ ان کے پاس ہے، اور وہاں انہوں نے گھر بھی بنا رکھاہے، طائف سعودی عرب میں بھی ڈاکٹر صاحب کا ایک اپنا مکان ہے جو کسی شیخ کے نام ڈاکٹر صاحب نے اپنے پیسے سے خرید رکھا ہے۔
ایک سال پہلے ڈاکٹر صاحب نے مجھ سے کہاکہ رمضان آنے والے ہیں، رمضان میں مکہ مدینہ جانے کاالگ ہی مزا ہے، وہاں بڑی رونق ہوتی ہے، آپ کو رمضان میں لے کر چلوں گا، رمضان میں جانا ذرا مہنگا ہوتاہے، میں نے ڈاکٹر صاحب سے کہا سستا مہنگا آپ کیوں دیکھتے ہیں، مالک نے ہمیں کسی چیز کی کمی نہیں رکھی ہے، آپ کا اور میرا دونوں کا خرچ میرے ذمہ ہوگا، مجھے بتا دیجئے آپ کا بزنس کلاس میں ٹکٹ بنوالیتا ہوں، ڈاکٹر صاحب نے کہا آپ کے ٹکٹ سے بزنس کلاس میں جانے کے مقابلہ میں میرے لئے پیدل وہاں جانا زیادہ خوشی کی بات ہوگی، آپ اپنا ٹکٹ بنوائیں، میں خود اپنا ٹکٹ بنوالوں گا۔





احمد اوّاہ:ڈاکٹر صاحب کی بڑی بات؟
اسعد عمر:اصل میں ڈاکٹر صاحب واقعی بہت اونچے درجہ کے انسان ہیں، ان کے معاملات سے مجھے لگاکہ وہ بڑے اعلیٰ درجہ کے سیّد ہیں، لالچ اور لُبھاؤ ان کے پاس کوبھی نہیں پھٹکتا، شاید ان کی اس صفت نے ہی مجھے مسلمانوں اور ا سلام کا غلام بنا دیا۔

احمد اوّاہ:جی تو پھر کیا ہوا؟
اسعد عمر:ڈاکٹر صاحب نے کسی ایجنٹ سے میرا عمرہ کا ویزہ لگوادیا۔
احمد اوّاہ: آپ کا پاسپورٹ تو ہندو نام سے ہوگا، عمرہ(کعبہ دیکھنے کاسفر) کا ویزہ کیسے لگا، کیا قبول اسلام کا کوئی سرٹیفیکیٹ بنوایا تھا؟

احمد اوّاہ:ڈاکٹر صاحب نے نہ مجھ سے کہاکہ وہاں جانے کے لئے مسلمان ہونا ضروری ہے، اور نہ کوئی سرٹیفیکٹ بنوایا، ڈاکٹر صاحب نے بتایاکہ جاننے والے ایجنٹ تھے، اور سفارت خانہ میں اچھا رسوخ تھا بس ان سے ہی کہہ دیا کہ نام ایسا ہے، اصل میں یہ مسلمان ہیں، جھوٹ ہی ڈاکٹر صاحب نے کہہ دیا، گزشتہ سال چوتھے روزہ کو ہم لوگ ممئی سے جدہ پہنچے، ایئرپورٹ سے اترکر ڈاکٹر صاحب نے کہا آپ کو کعبہ میں خود اپنی گاڑی سے لے کر چلوں گا، ان کی گاڑی جدہ میں کھڑی تھی، جو کسی دوست کو فون کرکے انہوں نے منگوالی تھی، انہوں نے کہاکہ آپ کو ایک ناٹک کرنا پڑے گا۔ میں نے پوچھا کیا، بولے نہاکر آپ کو احرام ایک چادر سفید اوپر اور سفید لنگی پہننی پڑے گی، میں نے نہاکر جیسے ڈاکٹر صاحب نے کہا احرام باندھ لیا، دوپہر ایک بجے کے آس پاس ہم نے اپنی گاڑی کسی پارکنگ میں مکہ سے باہر لگاکر روکی اور بسوں سے حرم پہنچے، جیسے ہی میں حرم میں داخل ہوا، میرے ہوش خراب ہوگئے، مجھے ایسا لگاکہ میں کسی اندھیر نگری سے روشن دنیا میں آگیا ہوں، میں وہ کیفیت نہ کبھی بھول سکتا ہوں اور نہ لفظوں میں بتا سکتا ہوں، میں نے کعبہ کو دیکھاتو نہ جانے  مجھے کیا مل گیا، میں نے ڈاکٹر راحت صاحب سے کہاکیا میں مالک کے اس گھرکو چھو سکتا ہوں؟ دوپہر میں روزہ کی وجہ سے ذرا بھیڑ کم تھی ڈاکٹر صاحب نے کہا سب لوگ پردہ پکڑ کر دعا مانگ رہے ہیں آپ کو کون روک رہا ہے، شوق سے جائیے، میں نے کعبہ کو جیسے ہی ہاتھ لگایا، نہ جانے میں نے کیا پالیا، مجھے رونا شروع ہوگیااور پھوٹ پھوٹ کر بچہ کی طرح رونے کو دل ہواور دیر تک روتا رہا، ڈاکٹر صاحب مجھے دیکھا تو زمزم لے کر آئے، اصل میں کچھ روز سے مجھے دل کی تکلیف بھی شروع ہوگئی تھی، وہ ڈر گئے کہ کچھ نہ ہوجائے، ڈاکٹر صاحب نے مجھے زمزم پلایا، میں نے ان سے روتے ہوئے کہا، میں نے بہت غلط کیا، مجھے اس پاک گھر میں آنا نہیں چاہئے تھا، میں تو اَپوتر (ناپاک) ہوں، ڈاکٹر صاحب نے کہا اپوتر کہاں ہو تم، تم نے یہاں آکر پاک احرام باندھا ہے، میں نے کہا یہ آتما (روح) تو ناپاک ہے، مجھے وہ کلمہ پڑھواؤ جو آتما کو پوتر (پاک) کرتا ہے، ڈاکٹر صاحب نے مجھے جلدی جلدی بتایا کہ یہ کلمہ ہے: اشہدُ اَن لا اِلٰہ الاللہ، اشہد اَن محمد اًعبدہُ و رسولہٰ۔ میں نے کہا ڈاکٹر صاحب ایسے دل سے نیں، مجھے انتر آتما (اندر دل) سے پڑھواؤ، انہوں نے مجھے کلمہ پڑھوایا، ڈاکٹر صاحب سے کہہ کر ہم لوگوں نے دارالتوحید جو حرم کے برابر ایک فائیو اسٹار بڑا ہوٹل ہے، اس کے کعبہ ویو سویٹ (جہاں سے کعبہ دکھائی دیتا ہے) دو روز کے لئے بک کرائے، اور گھر فون کردیاکہ مجھے کافی دنوں سے دل کی تکلیف ہورہی تھی، یہاں پر ایک دل کا ڈاکٹر مل گیاہے، میں علاج کراکے آؤں گا۔

احمد اوّاہ:ماشاء اللہ اس کے بعد آپ دو روز تک وہیں رہے؟
اسعد عمر:جی، یہ دو روز کیسے گزر گئے میں بیان نہیں کرسکتا، رمضان المبارک کی رونق اور حرم کی نورانیت اور سکون شانتی، بس میں نماز پڑھنے حرم جاتا(جیسی بھی پڑھ پاتا)، ایک طواف(کعبہ کا چکر) روزانہ کرتا، اور اوپر روم میں جاکر بیٹھ جاتا، سارا سارا دن اور رات کااکثرحصہ حرم کودیکھتا رہتا، حرم کی الگ شان، میں بیان نہیں کرسکتا کہ وہ شب و روز میرے کیسے گزرے۔

احمد اوّاہ:اس کے بعد ہندوستان آکر آپ نے کیا محسوس کیا؟
اسعد عمر:وہاں رہ کر ڈاکٹر صاحب نے مجھے میں ایک نوجوان مولانا صاحب کا نظم کردیاتھا، انہوں نے مجھے دین کی بنیادی باتیں بتائیں اور نماز یاد کرائی، اور پڑھنا سکھائی، الحمد للہ میں پابندی سے پانچ وقت کی نماز، اور تہجد کی آٹھ رکعت پڑھ رہا ہوں۔

احمد اوّاہ:آپ کے گھر والوں کو نماز پڑھنے پر اعتراض نہیں ہے؟
اسعد عمر:میری بیوی جو ڈاکٹر صاحب کی بہت فین ہے، اس کو میں نے ابھی تک نہیں بتایا ہے کہ میں مسلمان ہوگیا ہوں، اس مہینہ حضرت نے مجھے ایک مولانا کا نمبر دیا ہے، ان کو ڈاکٹر صاحب کے ساتھ لے کر اپنی بیوی کو کلمہ پڑھوانے کا ارادہ ہے، مجھے امید ہے کہ وہ میرے ساتھ نماز پڑھیں گی اور انہیں بھی شانتی محسوس ہوگی۔ انشاء اللہ وہ کلمہ پڑھنے میں دیر نہیں کریں گی۔

احمد اوّاہ:ابی(کلیم صاحب) بتا رہے تھے کہ پہلے ڈاکٹر صاحب خود بھی نماز روزہ کے پابند نہیں تھے؟
اسعد عمر:ڈاکٹر صاحب واقعی نماز روزہ سے دور تھے، اور دین سے ان کی دوری کی اس سے زیادہ اور کیا بات ہوسکتی ہے کہ انہوں نے مجھے حرم لے جانے کے لئے ایک باربھی نہیں کہا، کہ وہاں جانے کے لئے مسلمان ہونا ضروری ہے، چلو اوپر سے ہی کلمہ تو پڑھ لو(اور وہاں رمضان میں پانی پلادیا)، ڈاکٹر صاحب کا خاندانی تعلق سید گھرانہ سے ہے، وہ کیرکٹر کے لحاظ سے بہت اونچی سطح کے انسان ہیں، جب میں نماز پڑھنے لگااور نماز میں مجھے جو مزا آتا ہے اس کو ڈاکٹر صاحب سے میں نے شیئر کیا، تو اللہ کاشکر ہے کہ وہ بھی پانچ وقت کی نماز اور تہد کی پابندی کرنے لگے۔

احمد اوّاہ: ابی (کلیم صاحب) بتا رہے تھے کہ اس کے بعد ڈاکٹر صاحب بھی دعوت(اسلام سے تعارف،واقف کرانے) سے لگ گئے؟
اسعد عمر:مجھے کلمہ پڑھوایا تو انہیں خیال ہواکہ اس طرح تو بہت سے لوگ مسلمان ہوسکتے ہیں، اس کے بعد جو مریض ان کے پاس آتا اس کو کلمہ پڑھواتے تھے، میرے بعد ڈاکٹر صاحب نے کئی لوگوں کو کلمہ پڑھوایا، ان میں سے کئی لوگ ایسے مسلمان بنے کہ ان کے حالات دیکھ کر صحابہ(رسول کے ساتھی) کی یاد تازہ ہوتی ہے، پھر ڈاکٹر صاحب کو خیال ہواکہ جب یہی کام کرنا ہے تو سیکھ کر کام کروں، ان کے ایک سالے کھتولی، ضلع مظفرنگر کے رہنے والے ہیں،انہوں نے حضرت کا تعارف کرایا، حضرت سے وہ مدینہ میں ملے، پھر ممبئی میں گھر آنے کو کہا، اور الحمد للہ اب ڈاکٹر صاحب جسمانی، بانجھ پن اور پوشیدہ اِمراض کے ڈاکٹر ہونے سے زیادہ روح کے ڈاکٹر یعنی فل ٹائم داعی(اسلام سے تعارف،واقف کرانے والے)   بن گئے ہیں۔ انہوں نے حضرت سے ۳۲/ ایسے لوگوں کو بیعت کرایا جو سب تاجر(کاروباری)ہیں، اورایک سال کے اندر اللہ نے ان کو ڈاکٹر صاحب کے ذریعہ ہدایت عطا فرمائی ہے۔



احمد اوّاہ:اب آپ کا آئندہ کیا پروگرام ہے؟
اسعد عمر:رمضان المبارک میں اس سال اپنی بیوی کے ساتھ اگر انہوں نے کلمہ پڑھ لیاتو حرم میں رمضان گزارنے کا ارادہ ہے، اللہ سے پوری امید ہے وہ ضرور انہیں ہدایت دے گا۔ حرم کے رمضان کی بات ہی کچھ اور ہے، ایسا لگتا ہے کہ جنت اس زمین پر اتر آئی ہے، حضرت نے بتایاکہ رمضان ہدایت کے نصاب قرآن مجید کے نزول کا سیزن ہے، اور ہدایت کے جشن کا مہینہ ہے،اور کعبہ کے بارے میں قرآن نے کہا ہے کہ وہ عالموں کے لئے ہدایت ہے، (ہدی للعالمین) مولانا احمد میں اپنی بات بتاؤں مکہ آکر رمضان کا مہینہ کسی ایسی جگہ آئے کہ جہاں پر کسی کو پتہ نہ چلے کہ رمضان آئے کہ نہیں، تو میں بہت تو توبہ کرکے کہہ رہاہوں کہ میں گارنٹی سے رمضان کی نورانیت اور ہدایت کو انتر آتما یعنی اپنی اندرونی روح سے محسوس کرکے بتادوں گاکہ رمضان کی نورانیت اور ہدایت کا مہینہ شروع ہوگیاہے، اور اگر میری آنکھوں پر پٹی باندھ کر مجھے گھومتے گھماتے بغیر بتائے حرم شریف میں لے جایا جائے تو میں ایک ہزار پرسینٹ گارنٹی کے ساتھ سوبارتوبہ توبہ کرکے کہتا ہوں کہ میں اپنے اندر کی آنکھوں سے رب کا نور، حرم کا نور وہاں کے عالمی ہدایت کے ماحول کو محسوس کرکے شرط لگا کر بتا دوں گا کہ مجھے حرم میں داخل کردیا گیا ہے۔
میں حضرت سے بھی کہہ رہا تھاکہ رمضان اور حرم میں جتنا دعوت اور ہدایت کے لئے ماحول سازگار ہوتا ہے اتنا دوسرے دنوں اور مقام پر اس کا ہزارواں حصہ بھی نہیں ہوتا،اس لئے ماہ مبارک میں دعوت کے اسپیشل پلان بنانے چاہئے اور حرم کی تقاضوں کو بھی دعوت کے لئے خصوصی طورپر استعمال کرنا چاہئے۔

احمد اوّاہ: واقعی آپ نے بہت اہم نکتہ کی طرف توجہ دلائی،شہر رمضان الدی انزل فیہ القرآن ہدی للناس و بینات من الہدی والفرقان۔ قرآن مجید کا ایک اچھوتا پہلو ہے، اس پر عام طور پر داعی حضرات بھی توجہ نہیں کرتے اور ہم سبھی لوگ رمضان المبارک کے ہدایت اور دعوت کے سیزن میں زیادہ اسلام کی دعوت کی مارکیٹنگ کرنے کے بجائے، روزہ میں کیسے یہ کام ہوگا وہ کام ہوگا سوچتے ہیں۔ دوسری عبادات میں لگ جاتے ہیں، ایسے ہی حرم کے ہدی للعالمین کے پہلو سے کماحقہ فائدہ نہیں اٹھایا جاتا۔ جزا کم اللہ آپ نے اہم پہلو کی طرف توجہ دلائی؟

اسعد عمر:آپ کی محبت ہے جو ایسا سمجھتے ہیں ورنہ میں کیا ہوں۔
احمد اوّاہ:قارئین ارمغان(ماہنامہ) کے لئے آپ کوئی پیغام دیں گے؟

اسعد عمر:بس میں تو یہی کہوں گا کہ میں ایک خاندانی تاجر ہوں، ہم لوگ ہر چیز کو بیوپاری ذہنیت سے دیکھتے ہیں، اس مبارک ہدایت اور دعوت کے سیزن میں اسلام کی مارکیٹنگ اور دعوت کو بڑے پیمانہ پر کرنا چاہئے کہ ہدایت کی راہ میں رکاوٹ پیدا کرنے والے شیاطین بھی قید کرلئے جاتے ہیں، اور ہدایت دعوت کی منڈی اور بازار حرم(کعبہ) ہے۔ جس کے بارے میں خود ہدایت دینے والے مالک نے ہدی للعالمین کی خبر دی ہے، اس بازار میں تھوک میں ہدایت لینے اور وہاں سے آنے والے رٹیل بیوپاریوں کو ڈسٹری بیوٹر بنانے کے لئے ایک مضبوط پروگرام بنانا چاہئے۔
احمد اوّاہ:ماشاء اللہ بہت خوب، جزاکم اللہ بہت بہت شکریہ۔

اسعد عمر:شکریہ تو آپ کا کہ ماہ مبارک میں مجھے اس کارخیر میں شریک کیا، آپ سے اور ارمغان کے تمام قارئین سے میرے سارے پریوار اور پوری انسانیت کے لئے خصوصاً اس ماہ مبارک میں دعا کی درخواست کی جاتی ہے۔


نو مسلم شمیم بھائی ﴾شیام سندر سے ایک ملاقات

(حضرت مولانا کلیم صدیقی پر حملہ کرنے والے گروہ کے ممبر کا انٹرویو)

शमीम भाई (पूर्व गेंग मेम्‍बर श्याम सुंदर) से एक मुलाकात

احمد اواہ : السلام علیکم ورحمة اللہ و بر کاتہ‘
شمیم بھائی : وعلیکم السلام و رحمة اللہ و برکاتہ‘

 سوال : شمیم بھائی آپ جماعت میں سے کب آئے؟
 جواب : میں جماعت میں سے ۲۲ اپریل کو واپس آگیا تھا۔

 سوال : آپ کا یہ چلہ کہاں لگا تھا؟
 جواب : میرا یہ چلہ میوات میں لگا،بجنور کی جماعت تھی مفتی عباس صاحب امیر تھے، الحمدللہ اس چلے میں میرا پہلے چلے سے بہت اچھا وقت گزرا۔

 سوال : اچھا ماشاءاللہ ، آپ کا یہ دوسرا چلہ تھا؟
 جواب : ہاں احمد بھائی ، پہلا چلہ تو میرا جب مولانا صاحب حج سے آئے تھے اس کے فوراً بعد لگا تھا، حج سے آنے کے چار روز بعد میں نے کلمہ پڑھا تھا اور تین دن بعد میرے کاغذات بنواکر نظام الدین سے مجھے جماعت میں بھیج دیا گیا تھا، وہ چلہ میرا سیتا پور میں لگا تھا، مگر وہ جماعت ذرا میری جیسی تھی، میں یہ تو نہیں کہوں گا کہ اچھی نہیں تھی امیر بھی نئے تھے اور ساتھیوں میں بھی روز لڑائی ہوتی رہی ، چار ساتھی درمیان میں واپس آگئے میں تو یہ کہوں گا کہ میری نحوست تھی کہ اللہ کی راہ میں بھی مجھے میرے جیسے حال والوں سے سابقہ پڑا۔

 سوال : اچھا شمیم بھائی ، آپ اپنا خاندانی تعارف کرایئے؟
 جواب : میں مظفر نگر ضلع کے سکھیڑہ گاﺅں کے پاس ایک گاﺅں کے گوجر زمیندار پریوار میں پیدا ہوا، ۹۱اپریل ۴۸۹۱ءمیری جنم تتھی (تاریخ پیدائش )ہے، میرے پتاجی نے نام شیام سندر رکھا ، میرا خاندان پڑھا لکھا خاندان ہے،میرے چچا سرکاری افسر ہیں، میرے والد بھی ماسٹر تھے اور ستر بیگھہ زمین بھی تھی،میرے بڑے بھائی فوج میں ہیں، ایک بہن ہے ان کی شادی سرکاری اسکول کے ٹیچر سے ہوئی ہے، میں نے ہائی اسکول سے پڑھائی چھوڑ دی اور فلم دیکھنا ، سگریٹ پینا، گٹکہ کھانا اور آوارہ لڑکوں کے ساتھ رہنا میرا کام تھا، میرے پتاجی نے مجھے پڑھنے پر زور دیا تو میں گھر سے بھاگ گیا، میری سنگتی اچھی نہیں رہی اور پھر مجھے گولیاں کھانے کی عادت ہوگئی، کافی دنوں کے بعد میں کسی طرح گھر آیا، مگر میرا تعلق غلط لوگوں سے تھا، خرچ گھر والے دیتے نہیں تھے، میں نے خرچ بڑھا رکھا تھا مجبوراً گھر سے چوری کرتا، کبھی کچھ نکال کر بیچ آتا کبھی کچھ گھر والوں نے احتیاط کی تو پھر باہر سے چوری کرنے لگا، بات بگڑتی گئی اور میں لوٹ مار کر نیوالے لڑکوں کی گینگ میں جا ملا اور میرے اللہ کی رحمت پر قربان کہ یہ گینگ ہی میری نیا پار لگائی گئی۔

Aapki Amanat Aapki Sewa Mein hindi - urdu 
(good sound,  micro Lady voice )
लेखकः मौलाना मुहम्मद कलीम सिद्दीकी BSc (chem.)
maulana kaleem siddiqui (phulat)

---
2
Apr

نو مسلم شمیم بھائی ﴾شیام سندر سے ایک ملاقات

(حضرت مولانا کلیم صدیقی پر حملہ کرنے والے گروہ کے ممبر کا انٹرویو)

शमीम भाई (पूर्व गेंग मेम्‍बर श्याम सुंदर) से एक मुलाकात


 

 سوال : اصل میں گینگ میں رہنا تو نیا کو ڈبوتا ہی ہے، بس اللہ کی رحمت نے آپ کو پھول سمجھ کر اس گندی گینگ کی کیچڑ سے آغوش رحمت میں اٹھا لیا۔
 جواب : ہاں آپ سچ کہتے ہیں۔ اصل میں میرا خاندان اور پورا پریوار بڑے سجن لوگوں کا پریوار ہے میرے گھر والوں کے زیاد ہ تر مسلمانوں سے تعلقات رہے ہیں میرا بچپن بھی اسی ماحول میں گزرا، میں بد قسمتی سے اس ماحول سے دور ہوتا رہا مگر مجھے اس غلط ماحول سے سوبھاﺅ (فطرت) کے لحاظ سے میل محسوس نہ ہوا۔

 سوال : اپنے اسلام قبول کرنے کے بارے میں ذرابتائیے ؟
 جواب : احمد بھائی پچھلے سال دکھےڑی جلسہ سے واپس آتے ہوئے رات کو منصور پورسے پہلے آپ کے اور ہم سب کے ابی مولانا کلیم  صاحب کی گاڑی پر بدمعاشوں نے گولی چلادی تھی،ہمارے   ڈرایور سلیم  کے دو گولی  لگی تھیں ایک  ہاتھ میں اندر گھس گئی تھی دوسری گولی بالکل دل کے سامنے سینے پر لگی تھی ،کرتا بری طرح پھٹ گیا . ٣١٥  کی گولی ،مگر کلائی سے (اللہ کی رحمت سے ) بس  جیسے چھوکر واپس آگئی ،گولی کا نشان دیکھ کر آدمی خود حیرت  کرے گا کہ اللہ کی شان تھی ،اللہ تعالی اپنے سچے بندوں کو ساتھی بھی ایسے دیتے ہیں کہ گولی لگنے کے با وجود سلیم  نے گاڑی کو دو تین کلو میٹر  الٹا بیک گیر میں  دوڑایا اور موقع لگا کر موڑااور دس کلو میٹر  دور جاکر بتایا کہ مجھے گولی لگ گئی ہے اور حوصلہ نہیں  کھویا ،ورنہ ہمارے ساتھی تویہ  کہہ رہے تھے کہ ہم نے اسے نشانہ بنا کر گولی سامنے سے ماری تھی کہ ہم کویقین تھا کہ ڈرایور تو مر گیا  ہوگا ،کوئی دوسرابرابر والا گاڑی بھگا رہا ہے ۔           
 وہ جو گولی چلانے والے لوگ تھے سب میرے  اتھی تھے ،مگرمیرے اللہ کا کرم تھا میں دو ہفتہ سے بیمار ما ر ہوگیا تھا اور مجھے پیلیا ہوگیا تھا، میں مظفر نگر اسپتال میں بھرتی تھا، یہ خبر پورے علاقہ میں جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی، ہم آٹھ لوگوں کا گینگ تھا ، صرف میں ایک ہندو تھا اور سب سات لوگ مسلمان تھے اتفاق سے میرے علاوہ ساتوں اس روز اس واقعہ میں موجود تھے ، کھتولی کوتوالی نے سی آئی ڈی انچارج کو بلایا اور دونوں نے قسم کھائی کہ ایسے سجن، بھلے اور مہان آدمی کی گاڑی پر ہمارے چھیتر (علاقہ ) میں یہ حملہ ہوا ہے ہمارے لئے ڈوب مرنے کی بات ہے، قسم کھاکر عہد کیا جب تک مجرموں کو پکڑ نہ لیں گے اس وقت تک کھانا نہیں کھائیں گے، بھلا ایسے لوگوں پر گولی چلانے والے کب بچ سکتے تھے، تیسرے روز ان میں سے تین پکڑے گئے اور پٹائی پر سب نے بتادیا، باقی چار بھی ایک ہفتہ میں گرفتار ہوگئے، بہت سے کیس لوٹ مار چوری ڈاکے کے کھلے اور تھانہ انچارج نے ایسے کیس بنائے کہ ضمانت تو سالوں تک ممکن ہی نہیں تھی نہ ہوئی۔
ایک ہفتہ کے بعد میری طبیعت کچھ ٹھیک ہوئی، دوبار خون بھی چڑھا تو میری چھٹی ہوئی، دو ہفتے تک گھر پر ہی رہا، ساتھیوں کے پکڑے جانے کی خبر مجھے مل گئی تھی، میرا خون سوکھتا تھا کہ سختی میں میرا نام نہ لے لیا ہو، مگر دو مہینے تک جب ہمارے گھر پولیس نہ آئی تو کچھ اطمینان ہوا کچھ طبیعت بھی ٹھیک ہوگئی تو میں کسی طرح موقع لگا کر جیل میں ملائی کرنے گیا، جیل میں ساتھیوں نے سارا معاملہ بتایا اور مجھے بدھائی دی کہ تو بیمار ہوگیا ورنہ تو بھی ہمارے ساتھ جیل میں ہوتا، مظفر نگر جیل میں ان کی ملاقات کچھ قیدیوں سے ہوئی جو مولانا صاحب کے ان ساتھیوں کی کوشش سے جن کو دشمنی میں لوگوں نے جھوٹ ایک قتل کے کیس میں پھنسا دیا تھا مسلمان ہوگئے تھے، ان قیدیوں سے ملنے مولانا کلیم کئی بار جیل آئے، جیل والوں سے مولانا صاحب اور ان کے گھر والوں اور ان کی والدہ کے بارے میں کہانیاں سی سناتے رہتے تھے، ان کے گھر کا یہ حال ہے کہ اپنے چوروں کو خود چھڑا کر لاتے ہیں ، معاف کرتے ہیں ان کے گھر راشن پہنچاتے ہیں، کوکڑا گاﺅں کے میرے ایک ساتھی نے جو ہمارا سردرد تھا مجھ سے کہا تو پھلت جانا اور مولانا صاحب سے ہماری پریشانی بتانا اور خوب رونا ، منھ بناکر خوب پریشانیاں بتانا، میں نے کہا تمہیں شرم نہیں آتی ، بھلا ان کے یہاں جانے کا کس طرح منھ ہوسکتا ہے، مگر وہ زور دیتا رہا تو جاکر دیکھنا وہ تجھے کچھ نہیں کہیں گے، ان سے کہنا سب ساتھی دل سے معافی مانگ رہے ہیں اور سبھی عہد کررہے ہیں کہ اب اچھی زندگی گزاریں گے اور آپ کے مرید بھی بن جائیں گے، میری ہمت نہ ہوئی، ہفتے دو ہفتے کے بعد وہ مجھے زور دیتے رہے۔
بار بار کہنے پر مجھے بھی ان کے حال پر ترس آگیا اور میں پتہ لینے کے بعد پھلت پہنچا،سردی کا زمانہ تھا راستہ میں بارش ہوگئی اور میں بھیگ گیا، مولانا صاحب ظہر کی نماز کے لئے جا رہے تھے نماز کا وقت قریب تھا، مجھے دیکھا معلوم کیا کہاں سے آئے ہو؟ میں نے اپنے گاﺅں کا نام بتایا، مولانا صاحب گھر میں گئے اور میرے لئے ایک شرٹ پینٹ لے کر آئے اور بولے سردی سخت ہورہی ہے آپ اندر جاکر کپڑے بدل لیجئے، میرا نام پوچھا میں نے نام بتایا شیام سندر ، تو انھوں نے رضائی میں بیٹھ جانے کو کہا اور اندر سے بچے کو ایک کپ چائے لانے کو کہا، نماز کے لئے جاتے وقت ہنستے ہوئے بولے ، آپ تو اس علاقے کے مہمان ہیں جہاں ہماری اچھی مہمانی ہوئی تھی، ہمارے ڈرائیور کے گولی لگی تھی، میں یہ سن کر سہم گیا، میرے چہرے کے اترنے سے مولانا صاحب بولے آپ کیوں شرماتے ہیں، کوئی آپ نے گولی نہیں چلائی تھی، آپ تو ہمارے مہمان ہیں، مولانا صاحب نماز پڑھنے چلے گئے۔
نماز پڑھ کر واپس آئے تو میں نے الگ بات کرنے کے لئے کہا، برابر کے چھوٹے کمرے میں مجھے لے گئے میں نے اپنا تعارف کرایا اور اپنے ساتھیوں کا حال اور ان کے گھر کا حال خوب بناوٹی رونا بنا کر سنایا اور مولانا صاحب سے کہا آپ چاہیں تو ان کی ضمانت ہوسکتی ہے، مولانا صاحب نے کہا نہ ہم نے ان کو گرفتار کیا ہے اور ہم ان کو مجرم کم اور بیمار زیادہ سمجھتے ہیں، ایسے سچے اور اچھے دین کو ماننے والے ، ایسے رحمت بھرے رسول اللہ ﷺ پر ایمان رکھنے والے، ایسی بے دھڑک لوگوں کی جانیں لیں گے تو پھر دنیا کا کیا ہوگا؟ ان کا علاج یہ ہے کہ ان سے کہوں یا عمر قید میں رہو یا تین چلے کے لئے جماعت چلے جاﺅ، اگر وہ سچے دل سے اپنی غلطی پر شرمندہ ہیں تو وہ جیل سے سیدھے تین چلے کے لئے ساتوں جماعت میں چلے جائیں، ہم خود گواہی دینے کے بجائے ان کی ضمانت کو تیار ہیں۔
مولانا صاحب نے مجھ سے کہا ، آپ پہلے کھانا کھالیں میں ابھی آتا ہوں، ایک صاحب اندر سے کھانا لے آئے، تھوڑی دیر میں مولانا آئے اور مجھ سے کہا اپنے ساتھیوں کی جیل کی تو تم فکر کرتے ہو تمہیں بھی ایک جیل میں مرنے کے بعد جانا پڑسکتا ہے، وہ جیل ہمیشہ کی ہے جس سے ضمانت بھی نہیں ہے وہ نرک کی جیل ہے، جس میں ایسی سزائیں ہیں جن کا تصور بھی یہ دنیا کی پولیس والے نہیں کرسکتے ، اس جیل سے بچنے کے لئے یہ کتاب پڑھو یہ کہہ کر ” آپ کی امانت آپ کی سیوا میں“مجھے دی پھر وہ ایک ساتھی کو میرے پاس بھیج کر چلے گئے ان سے بات کرو، وہ مجھے مسلمان ہونے کے لئے کہتے رہے اور بولے تم بڑے خوش قسمت ہو کہ مالک نے آپ کو اسی بہانے ہمارے حضرت کے یہاں بھیج دیا، مالک کی مہر ہوتی ہے تو اللہ اس در کا پتہ دیتے ہیں، میں نے ان سے اس کتاب کو پڑھنے کا وعدہ کیا اور اس لحاظ سے خوش خوش گھر لوٹا کہ چار مہینے جماعت میں جانا تو بہت آسان ہے، میں نے اگلے روز جیل جاکر ساتھیوں کو خوش خبری سنائی انھوں نے پوری بات سنی اور بہت روئے ایسے آدمی کے ساتھ ہم نے بڑا ظلم کیا اور پھر ان نو مسلم قیدیوں کے ساتھ رہنے لگے نماز پڑھنی شروع 
کردی ، روزانہ تعلیم میں بیٹھنے لگے اور تین قیدی ان کے کہنے سے مسلمان بھی ہوئے۔
میں نے دوسرے روز وہ کتاب پڑھی ، ایک اجنبی آدمی کے ساتھ مولانا صاحب کے برتاﺅ نے میرے اندر ون کو مولانا
کلیم صاحب کے ڈرائیورسلیم سینہ پر گولی کا نشان دکھاتے ہوئے 

 کا کردیا اور مجھے اندر میں ایسا لگ رہا تھا کہ میں مولانا کا غلام ہو گیا ہوں، اس کتاب نے مجھے اور بھی جذباتی بنادیا، میں تین دن کے بعد پھلت گیا مولانا نہیں ملے ، بہت مایوس واپس لوٹا دوسری بار گیا، تیسری بار گیا تو معلوم ہوا کہ وہ آئے تھے 
اور آج ہی حج کے سفر پر چلے جائے گے اور ایک مہینے بعد آئیں گے۔
ایک ایک دن کر کے دن گنتا رہا ، میں بیان نہیں کرسکتا احمد بھیا، میں نے ایک مہینہ سالوں کی قید کی طرح گزارا، اللہ کا کرم ہوا میں نے پھلت فون کیا معلوم ہوا کہ مولانا صاحب آگئے ہیں اور کل تک رہیں گے، ۶۱جنوری کو صبح کے دس بجے میں نے مولانا صاحب کے پاس جا کر کلمہ پڑھا میں نے مولانا صاحب سے کہا کہ میرے پتاجی مجھے مارتے اور ڈانتے تو کہا کرتے تھے کہ نالائق ہمارے بڑے تو یہ کہا کرتے تھے، کہ انسان وہ ہے کہ اس کے دشمن بھی اس سے فائدہ اٹھائیں، تو نے اپنے ہی گھر کو نرک بنادیاہے، میں یہ سن کر کہتا ایسے لوگ کسی دوسرے لوک میں ہوں گے، لیکن آپ کے قاتلوں کے ساتھ رہنا میرے لئے ایمان لانے کا ذریعہ بن گیا، مولانا صاحب نے کہا میں کیا بلکہ وہ مالک جس نے پیدا کیا اس کو آپ پر رحم آگیا، آپ رحمت کی قدر کریں، میرا نام مولانا صاحب نے شمیم احمد رکھا۔

 سوال : پھر اس کے بعد آپ جماعت میں چلے گئے؟
 جواب : دوسرے روز میرے کاغذات میرٹھ بھجواکر بنوائے اور مجھے ساتھ لے کر مولانا صاحب دلی گئے اور ایک مولانا کے ساتھ مجھے مرکز بھیج دیا، سیتا پور چلہ لگا، کچھ نماز وغیرہ تو میں نے سیکھ لی واپس آکر میں نے کار گزاری سنائی مولانا صاحب نے کہا چالیس دن میں اگر آپ کلمہ بھی اچھی طرح یاد کر کے آگئے تو کافی ہے، آپ کو نما ز بھی خاصی آگئی ہے،دو بارہ جاکر اور اچھی طرح یاد کر لینا، کچھ روز میں مظفر نگر ایک مدرسہ میں رہا پھر جماعت میں دوبارہ گیا، الحمدللہ اس بار میں نے ایک پارہ بھی پڑھ لیا اور اردو بھی پڑھنا سیکھ لی، گھر والوں اور ساتھیوں کے لئے دعا بھی کی ، واپس جاکر جیل گیا اور ساتھیوں سے جماعت اور مسلمان ہونے کی کارگزاری سنائی، وہ بہت خوش ہوئے، اب انشاءاللہ جلدی ان کی ضمانت ہونے والی ہے، دو لوگوں کی ضمانت تو کسی طرح ہوگئی مگر میں نے ان کو بھی تیار کیا ہے وہ ساتوں انشاءاللہ جلد چار مہینے کی جماعت میں جانے والے ہیں۔

 سوال : جماعت سے واپس آکر آپ گھر گئے؟ تو گھر والوں کو آپ نے کیا بتایا؟
 جواب : میرے گھر والے یہ سمجھ رہے تھے کہ پھر گینگ میں چلا گیا ہوں، میرے گھر سے باہر جانے کے وہ عادی تھے ان کے لئے یہ کوئی نئی بات نہیں تھی ، ٹوپی اوڑھ کر کرتا پاجامہ پہن کر میں گھر پہنچا تو گھر والے حیرت میں پڑ گئے، شروع میں میرے پتاجی بہت ناراض ہوئے، پھر میں نے پھلت جانے کی اور وہاں کی ساری رپورٹ سنائی تو وہ خاموش ہو گئے، میں نے ایک دن بہت خوشامد سے ان سے وقت لیا کمرہ بند کرکے دو گھنٹے ان سے دعوت کی بات کی، پھر آپ کی امانت ان کو دی الحمدللہ، اللہ نے ان کے دل کو پھیر دیا اور وہ پھلت جاکر مسلمان ہو گئے، ہمارے گاﺅں میں مسلمان نام کے برابر ہیں مولانا صاحب نے ان سے ابھی اظہار اور اعلان کرنے کے لئے منع کردیاہے، البتہ وہ گھر والوں کو سمجھانے میں لگ رہے ہیں۔ خدا کرے ہمارا سارا گھر جلد مشرف بہ اسلام ہوجائے۔

 سوال : ماشاءاللہ بہت خوب ، اللہ تعالیٰ مبارک کرے، آپ کوئی پیغام ارمغان کے واسطہ سے مسلمانوں کو دیناچاہیں گے؟
 جواب : میں اپنی بات کیا کہوں میرا منھ کہاں میں کچھ کہہ سکوں ، مگر میں ضرور کہوںگا جو مولانا صاحب کہتے ہیں، کہ مسلمان اپنے کو داعی اور ساری امت کو مدعو سمجھنے لگے تو ساری دنیا رشک جنت بن جائے گی اور داعی طبیب اور مدعو مریض ہوتا ہے وہ آدمی نہیں جو اپنے مریض سے مایوس ہو اور وہ بھی طبیب نہیں جو مریض سے نفرت کرے، اس سے کراہت کرے، اسے دھکے دیدے، مسلمانوں نے اپنے مریضوں کو اپنا حریف ، اپنا دشمن سمجھ لیا ہے، اس کی وجہ سے خود بھی پس رہے ہیں اور پوری انسانیت ایمان اور اسلام سے محروم ہورہی ہے۔

 سوال : ماشاءاللہ! بہت اچھا پیغام دیا، شمیم بھائی، بہت دنوں سے میں انٹرویو لے رہا ہوں مگر اتنی اہم بات آپ نے کہی، آپ کو یہ سمجھ مبارک ہو۔
 جواب : احمد بھائی! بس یاد کرکے میں نے آپ کو سنادیاہے، سبق تو مولانا صاحب نے یاد کرایا ہے۔
 سوال : بہت بہت شکریہ! السلام علیکم
 جواب : آپ کا بھی شکریہ! وعلیکم السلام ورحمة اللہ 
مستفاداز ماہ نامہ ارمغان، جون ۷۰۰۲ئ
Monthly "Armughan"-june 2007




new muslim Noorul islam interview


۲ دسمبر ۱۹۵۸ میں مغربی بنگال کے ایک نہایت متشدد مذہبی ہندو ویشنو خاندان میں پیدا ہوا،ہمارا خاندان ایک پڑھا لکھا خاندان ہے،اس خاندان مین مسلمانوں کے تعلق سے چھوت چھات کا عالم یہ ہے کہ اگر کوئی مسلمان گھر میں داخل ہو جائے تو گوبر کے پانی سے گھر کو پاک کیا جاتا ہے،باپ دادا نے میرا نام پریم انگسوشیکھرادھیکاری Premangshu Shehkar Adhikaryرکھا تھا ،بچپن سے میرا عجیب حال تھا ،خاندانی ماحول کے اثر سے مسلمانوں سے بہت زیادہ نفرت تھی،کوئی مسلمان بچہ اگر ہمارے گھر کے پاس ہو تا یا کھیلتا ہوا ملتا تو ڈانٹ کر بھگا دیتا ان سے نفرت کرنا اور ان کو پاپی سمجھنا(بطور خاص میرے ذہن میں مسلمانوں کی گائے کشی کی نفرت بیٹھی ہوئی تھی)یہ چیزیں میرے دل میں بسی ہو ئی تھیں۔
جہاں پر ہندوؤں کا محلہ ختم ہو تا ہے وہیں ہمارا گھر تھا،اور وہیں ایک پرائمری اسکول اور ایک مسجد تھی ،اور پھر مسلمانوں کا محلہ شروع ہو جاتا تھا،یوں تو ہمارے گھر ہی میں مندر تھا اس میں روزانہ پوجا وغیرہ ہو تی تھی،لیکن کسی خاص تہوار کے موقع پر باقاعدہ منڈپ باندھا جاتا تھا،اور دھوم دھام سے پوجا ہوتی تھی، چونکہ مسلمانوں کا محلہ بالکل ہمارے مکان سے قریب تھا،ان کے چھوٹے چھوٹے بچے منڈپ میں مورتی دیکھنے آتے تھے،اس وقت میں ان کو جھڑک دیتا اور یہ کہہ کر بھگا دیتا تھا کہ تم لوگ گندے ہو،خراب اور اچھوت ہو،اس وقت میری عمر سات آٹھ سال کی تھی،جب میں چوتھی کلاس میں پڑھتا تھا اس وقت میری عمر نو سال کی تھی ایک دن ہمارے پڑوس میں رہنے والا ایک مسلمان لڑکا جس کی عمر تقریباً ١٤ سال تھی  اور جس کاپورا گھرانا پڑھا لکھا تھا ،اس خاندان کے لوگ اونچے اونچے سرکاری عہدوں پر فائز تھے،ایک دن شام کے وقت اسکول کے صحن میں بیٹھ کر اسلام کی تعریفیں کرنے لگا اس نے کہا کہ تمہاری ٣٦٠ مورتیاں ہمارے کعبے میں رکھی ہوئیں تھیں ، میں سوچ میں پڑ گیا کے ہمارے دیوی دیوتا تمہارے کعبہ میں ، پھر اس نے حضرت ابراہیمؑ کاقصہ سنایا کہ حضرت ابراہیمؑنے سورج کو چاند کو اور ستاروں کو خدا تسلیم کیا ،پھر ان کے طلوع و غروب کو دیکھ کر ان کی خدائی کا انکار کردیا ،کہ یہ خود مختار نہیں ہیں ،ان کا بھی کوئی مالک ہے،اور والد کے ساتھ میلے میں جانے سے آپ کے انکار ،پھر بتوں کو توڑ کر کلہاڑی بڑ ے بت کے گلے میں ڈالنے ،پھر نمرود بادشاہ نے حضرت کے ساتھ جو کچھ کیا ،پورا واقعہ تفصیل سے سنایا ،اس واقعہ سے میرے دل پر بہت زیادہ اثر ہوا،جس کو میں بیان نہیں کرسکتا،اور دل اندر سے کہنے لگاکہ بات تو صحیح لگ رہی ہے کہ یہ کیسا بھگوان ہے جو دوسروں کوتو بچانا بہت دور کی بات ہے اپنے آپ کو نہیں بچا سکا ، اور ایک عجیب سا ڈر لگنے لگا۔
مغرب کے بعد جب ہوم ورک کرنے بیٹھا تو دل ہی نہیں لگ رہا تھا، فلم کی طرح دماغ میں یہ باتیں گردش کر رہی تھیں،اب مجھے احساس ہو نے لگا کہ مسجد میں جو اذان ہو تی ہے اور اس میں اللہ کانام لیا جاتا ہے ،اللہ اکبر کہتے ہیں اس کا مطلب یہ ہے کہ اللہ کوئی ہستی ہے،جو بہت طاقت والی ہے،دوسرے دن شام کو پھر ان سے ملاقات ہوئی اور میں نے عاجزی سے کہا کہ نذر الاسلام بھائی آج بھی کچھ سناؤ نا ۔انہوں نے پھر حضرت ابراہیمؑ کی اہلیہ محترمہ حضرت ہاجرہ اوربیٹے حضرت اسماعیل ؑ کا پورا واقعہ سنایا،یہ سن کر دل میں آیا کہ اللہ میاں اپنے بندے کا امتحان لیتے ہیں اور بے پناہ محبت بھی کرتے ہیں ،انہوں نے پھر بتایا کہ اللہ تعالی مسلمانوں کو مرنے کے بعد جنت (سورگ)دے گا،اور جو بے ایمان ہوں گے ان کو دوزخ(نرک)میں ڈالا جائے گا،دوزخ میں آگ اور سڑا ہوا خون اور پیپ ہوگا،سانپ ہو ں گے ،بچھو ہوں گے ،جو ڈستے رہیں گے،اتنی تکلیف ہو گی کہ بیان نہیں کرسکتے،وہاں کوئی بچانے نہیں آئے گا’’تو تو ہندو ہے ، اگر ایمان نہیں لایا تو تجھے بھی دوزخ میں ڈالدیں گے،اورتم لوگوں کے بھگوان تم کو کیا بچائیں گے،بھگوان کو بھی تمہارے ساتھ دوزخ میں ڈالدیں گے،اور پھر ایمان کا مطلب بھی بتایا کہ اللہ کو دل سے ایک مان لینا اور حضرت محمد ﷺ کو اللہ کا رسول مان لینا ،ایما ن کہلاتا ہے ،اور جو ’’لا الہ الا اللہ محمد رسول اللہ‘‘ (ﷺ) کایہ کلمہ پڑھ لیتا ہے وہ مسلمان کہلاتا ہے،لیکن تیرا مسلمان ہو نا بہت ہی مشکل ہے ، تیرے خاندان والے تجھے مار ڈالیں گے،اور یہ بھی بتایاکہ مرنے کے بعد قبر میں تین سوال ہوں گے،(۱)من ربّک(۲)ما دینک (۳)ما تقول فی ھذا الرجل،جو ایمان والا ہو گا وہ توآسانی سے جواب دے سکے گا اور جو ایمان والا نہیں ہو گا وہ جواب نہیں دے سکے گا،ہر سوال کے جواب میں ہائے ہائے میں نہیں جانتا ہی کہتا جائے گا،پھر ان کو مار پڑے گی اور پھر دوزخ میں ڈال دیا جائے گا ، مجھے ڈر لگنے لگا ،اور فکر ہو گئی کہ کیا کروں ،پھر میں نے دل دل میں ٹھان لیا کہ کچھ بھی کرنا پڑے ،ان تینوں سوالوں کے جواب خوب یاد کرلوں گااور جب مرنے کے بعد مجھ سے پو چھا جائے گا تو اس وقت میں بتا دوں گا،پھر میں جوابوں کو خوب یا د کرنے لگا۔
میں نے نذر الاسلام سے کہا بھائی مجھے وہ کلمہ یاد کرادو مجھے کلمہ یاد کرا دیا،میں اس کو روزانہ پڑھا کرتا ،اس سال پرائمری کا کورس پورا ہو اتوگھرسے ایک کلو میٹر دور ہائی اسکول میں پانچویں کلاس میں ایڈمیشن لیا ،اس میں نذر الاسلام بھائی پہلے سے پڑھتے تھے،اب تو ان کے ساتھ ہی آنا جانا شروع ہو گیا ،اور وہ راستہ بھر کلمے اور درود شریف وغیرہ یاد کراتے جاتے اور بتاتے جاتے کہ کوئی مصیبت آئے تو درود شریف پڑھنا،مصیبت دور ہو جائے گی میری کلاس میں اور بھی کئی ساتھی مسلمان تھے ،وہ بھی دین کی باتیں بتاتے رہتے تھے،مجھے بہت اچھا لگتا تھا ،افسوس یہ کہ نذر الاسلام بھائی پہلے سے اس اسکول میں پڑھتے تھے ،اور میرا پہلا سال تھا،انہوں نے آٹھویں تک اسکول پڑھ کر اسکول چھوڑ دیا،تصویر سازی کی تعلیم حاصل کرنے کیلئے کلکتہ چلے گئے،ہم آٹھویں تک پہنچے کہ والد صاحب نے اس اسکول سے اٹھا کر ایک خالص ہندو اسکول میں ایڈمیشن کرادیا،اب کیا تھا جو مسلمان ساتھی تھے ان سے دوری ہو گئی،اور اسلام سے جو لگاؤ تھا وہ بھی آہستہ آہستہ دور ہونے لگا۔ایک دن گھر کے پاس دھوم دھام سے سرسوتی کی پوجا ہو رہی تھی،میں مورتی کے سامنے کھڑا ہو کر درشن کررہا تھا،اچانک میرے بازو میں نذر الاسلام بھائی کے چچازاد بھائی آکر کھڑے ہو گئے اور آہستہ سے کان میں کہنے لگے کہ جس کو تم پوج رہے ہو اس کو تو تمہیں لوگوں نے بنایا ہے،دیکھو آنکھ بنائی ہے جس سے وہ دیکھ نہیں سکتی،ہاتھ بنایا ہے مگر کچھ کر نہیں سکتا،یہاں تک کہ مکّھی بھی بدن نہیں اڑا سکتی ،اور اوپر سے قیمتی کپڑا پہنا کر سجادیا ہے،اندر سے پول ہی پول ہے،ایسے مٹی کے ڈھیر کے سامنے اپنی اس قیمتی پیشانی کو جھکا دیتے ہو ،او ر گائے کا پیشاب جو کہ ناپاک(اپوتر)چیز ہے ،اس سے پوجا کرتے ہو اور پھر پیتے ہو ،کتنی بیوقوفی ہے ،سوچو تو سہی کہ تم یہ کیا کررہے ہو ؟پہلے تو ان کی یہ باتیں مجھے بری لگیں ،اس لئے کہ اسکول کے ساتھی سبھی چھوٹ گئے تھے،ایمان کے اوپر پردہ پڑگیا تھا،جاتے جاتے کہا کہ اس پر غور کرنااورسوچنا۔
بعدمیں اللہ نے سوچنے کی توفیق عطا فرمائی کہ جو بات یہ کہہ رہے ہیں ہے، توبالکل صحیح پھر ہم کیوں جھوٹے دیوتاؤں کی پوجا کریں؟اوراپنے آپ کو نرک(دوزخ)میں جھونک دیں،اس وقت میری عمر
 16؍سال کی تھی،اب فکر ہو گئی کہ ہندو دھرم کو کس طرح چھوڑوں ؟اور اسلام کو کیسے اپناؤں؟اور پھر کہاں جاؤں؟
میرے تمام رشتہ دار مجھے بہت چاہتے تھے،یہاں تک کہ مسلمان محلہ والے بھی بہت چاہتے تھے،اب تومسلمانوں کے گھروں میں میرا آنا جانا شروع ہو گیا ،ان لوگوں سے جتنی نفرت تھی اتنی ہی محبت ہو گئی،مسلمانوں میں سے کئی دوست بن گئے، ان کی مائیں مجھے اسلام کے بارے میں بہت کچھ بتا تی تھیں،اور مجھے بہت ہی اچھا لگتا تھا ،مسجدسے اذان کی آواز آتی تھی تو بہت اچھا لگتا تھا،اور میں دھیمی آواز سے اذان کو دہرا تا تھا،ایک دن اذان کا ترجمہ بھی سیکھ لیا ،اب مجھے ایسامحسوس ہو نے لگا کہ اللہ تعالیٰ سامنے موجود ہیں ،میں ان کو دیکھ رہا ہوں ،اور وہ مجھے دیکھ رہے ہیں ،دل میں اتنا سکون ملتا تھا کہ میں بتا نہیں سکتا،لیکن ایک مستقل الجھن رہتی تھی کہ میں اپنے خاندان کو،اپنے چچا، پھوپھی، دادا ،نانا، ماموں اور کئی رشتہ دار جو بہت چاہتے تھے،پیار کرتے تھے ،ان کو کس طرح چھوڑوں ،مجھے بہت ہی مشکل معلوم ہو نے لگااور مایوس ہو نے لگا،اور دل میں سوچنے لگا کہ اب تو نرک (دوزخ)میں جانا یقینی ہو گیاہے،مرتے ہی اللہ میاں مجھے نرگ میں ڈالیں گے۔
ہمارے گھر کے پیچھے سے ریل کی لائن بچھائی جارہی تھی، اس وقت پورے دن میں ایک دو گاڑی چلتی تھی،اسکول جانے کا یہ بھی ایک راستہ تھا،گرمی کا موسم تھا،ریل کی پٹری بے حد گرم ہوجاتی تھی،میں نے سوچا کہ مجھے ننگے پاؤں اس پٹری پر چل کر اسکول جانا چاہیے تاکہ گرمی سہنے کی عادت پڑ جائے،جس سے نرک کی آگ کو برداشت کرنے کی کچھ تو ہمت ہو،چنانچہ میں ننگے پاؤں گھر سے نکلتا تھا ،کئی مسلمان ساتھی بھی ساتھ میں جاتے تھے، جو دوسرے اسکول میں پڑھتے تھے،کہتے کہ جوتے پہن کر کیوں نہیں آتا؟اور پھر ننگے پاؤں گرم گرم پٹری پر چل رہا ہے،کیا تمہارا پاؤں جلتا نہیں ؟میں صرف اتنا کہہ دیتا کہ مجھے اچھا لگتا ہے،اب تو روزانہ ننگے پاؤں پٹری پر چل کر اسکول جانے لگا، مسلمان ساتھیوں نے کہا تجھے کیا ہو گیا ہے؟ایک تو ننگے پاؤں اور پھر پٹری گرم ؟کیوں اپنے آپ کو تکلیف میں ڈال رہا ہے؟میں نے دکھ بھری آواز میں کہا، بھائی تم لوگ مرنے کے بعد سورگ میں چلے جاؤگے،مجھے تو نرک میں جانا پڑے گا،تو ابھی سے پریکٹس Practiceکررہا ہوں ،تکلیف میں کچھ کمی محسوس ہو،(یہ تو بندہ کی ایک سوچ تھی ورنہ جہنم کی آگ کی شدت کا تو کوئی تصور بھی نہیں کرسکتا)۔
پھر مجھے اسلام سے لگاؤ ہو نے لگا ،اسکول میں خاموش رہنے لگا گھر کے پاس اسکول کے میدان میں مسلمانوں کا کبھی کبھی پروگرام ہوتا تھا ،پروگرام میں بڑے بڑے مولانا آتے تھے،کھیلنے کے بہانے سے میں جاکر کام میں کچھ مدد کردیتا،اس سے میرے دل میں ایک سکون سا محسوس ہو تا،چچا وغیرہ ان حضرات کا بہت مذاق اڑاتے تھے،مجھے اچھا نہیں لگتا تھا،اور چپکے چپکے ان حضرات کا بیان سنتا تھا۔
Secondry Educationکے امتحان میں اب صرف دو ڈھائی ماہ باقی تھے،نصاب اتنا ہارڈ(مشکل) تھاکہ میں تو درود شریف ہی پڑھنے لگتا ،اسکول میں سرسوتی پوجا ہو رہی تھی، ہمارے سر (Sir)نے ہماری پوری جماعت سے کہا کہ ’’پشپا نجلی‘‘ کے بعد سب پاس ہو نے کی پراتھنا کرنا کہ علم کی دیوی ہم سب کو اچھے نمبرات سے پاس کرادے،سب ہاتھ جو ڑ کر کامیابی کی پراتھنا کررہے تھے ،میں نے بھی ظاہراً ہاتھ جوڑ کرپراتھنا کی ، تاکہ کسی کو میرے حال پر شک نہ ہو،میں نے کہا :اے مورتی اگر تیرے اندر شکتی (طاقت)ہے اور تو سچی ہے تو مجھے فیل کردے اور بھی بہت کچھ بولتا رہا جو سب مجھے یاد نہیں ،ادھر اُدھر آکر تنہائی میں دعا مانگتا’’اے!میرے اللہ تجھے میں نے اپنا معبود مان لیا اور تجھے سچا جاناہے ،تو مجھے پاس کرادے،ورنہ وہ بت کہیں سچ نہ ہوجائے اور میرا ایمان نہ ڈگمگاجائے،دیکھتے دیکھتے بورڈ کا امتحان آکر ختم بھی ہو گیا،رزلٹ آنے میں دو تین ماہ باقی تھے، اس موقع پر میں نے مسلمان غریب بچوں کو ٹیوشن پڑھانا شروع کردیا تھا تاکہ اپنے اخراجات کا انتظام ہو جائے۔
والد صاحب زیورات بناتے تھے ،ان کی ایک دوکان تھی، اسی کے ساتھ ساتھ وہ ایک اچھے مغنی بھی تھے،انہوں نے ہم بھائی بہنوں کو گانا سکھانے کیلئے ایک ماسٹر مقررکردیااور کہاکہ تم لوگ بھی گانا بجانا سیکھو،اور فلم وغیرہ دیکھنے کیلئے والد صاحب خود پیسے دیتے تھے۔
میں جن لوگوں کے گھر ٹیوشن پڑھانے جاتا تھا ان لوگوں سے میرا اتنا تعلق ہو گیا تھا کہ وہ لوگ مجھ سے بے تکلف ہو گئے، اور اسلام کے بارے میں روزانہ کچھ نہ کچھ باتیں ضرور ہو تی تھیں، کیا بتاؤں مجھے تو اب اسلام کے سچا ہو نے میں اور صحیح دھرم ہونے میں رتی بھر بھی شک نہیں رہا،اور ہندو دھرم سوفیصد من گڑھت، خیالی اور بے بنیاد دھرم معلوم ہو نے لگا،سراسر اندھے عقائدمیں جکڑا ہوا محسوس ہو نے لگا،گھر میں فلمی کتابیں تھیں، اس کے اندر دینی کتابوں کو چھپا کر پڑھتا تھا،تاکہ کوئی اچانک دیکھے تو یہ سمجھے کہ یہ تو فلمی کتاب پڑھ رہا ہے،اور فلم دیکھنے کا بہانہ کرکے دینی پروگراموں میں چھپ چھپ کر چلا جاتا ،اسی طرح کسی مدرسہ میں چلاجاتا،ایک دن منصور بھائی نام کے ایک ساتھی کہنے لگے کہ میں تمہارے گھر کے پاس سے جب گذرتا ہوں توسنگیت اور گانے کی آواز آتی ہے ،ایسالگتا ہے کوئی گانا بجانا سیکھ رہا ہے،میں نے کہا کہ ہاں !ہم بھائی بہن سیکھتے ہیں،انہوں نے کہا کہ تم تو اللہ اور اللہ کے رسول ﷺ کو مانتے ہو اور اسلام میں گانا بجانا حرام (سخت منع ) ہے،میں نے کہا اچھا بھائی مجھے معلوم نہیں تھا،ٹھیک ہے آج سے گانا بجانا بند۔دوسرے دن ماسٹر صاحب آکر بلا نے لگے،تو میں نے صاف انکار کردیاکہ میرا دل نہیں چاہتا،اب سے میں گانا سیکھنے نہیں آؤں گا،اسی ساتھی نے مجھے ایک دن آتے دیکھا تو پوچھاکہاں گئے تھے،میں نے کہا’’ سنیما‘‘ دیکھنے گیا تھا،انہوں نے کہا کہ میرے بھائی اسلام میں سنیما دیکھنا بہت بڑا گناہ ہے، میں نے کہا آج سے وہ بھی بند،اس طریقہ سے بہت سے گناہوں سے میرے اللہ نے مجھے بچایا،چونکہ ابھی تو ہماری چھٹی چل رہی تھی،تو میں مولانا صاحب سے ملنے کیلئے اکثر گھر کے پاس مسجد میں چلا جاتا تھا،اور دین کی باتیں سنتا تھا،اور معلوم بھی کرتا تھا۔
جیسے جیسے وقت گذرتا گیا گھر میں گھٹن محسوس ہو نے لگی، چاروں طرف ناپاکی کی وجہ سے پریشان رہنے لگا،سب سے زیادہ مصیبت یہ تھی کہ گھر میں آئے دن پوجا ہوتی رہتی تھی،مورتیوں کو سجدہ کرنا پڑتا تھا،پروہت اور گھر کے ہر بڑے کو بھی،پھر پرساد کھانا اور ایک گندی چیز جس کو پنچمرِت کہتے ہیں اس کو تو وہیں پینا پڑتاتھا،اور اس وقت چھپ بھی نہیں سکتا تھا،حاضر رہنا پڑتا تھا ورنہ شور مچ جاتا تھا،جہاں تک ہو سکتا تھا اس کوشش میں رہتا تھا کہ نظر بچا کر پھینک دوں،مورتیوں کے بارے میں طرح طرح کے اعتراضات دل میں پیدا ہوتے توکبھی دادا سے پوچھتا ،چاچی سے پوچھتا اور گھر میں اکثر پنڈت جی آتے تھے ان سے بھی طرح طرح کے سوالات کرتا تھا،امّی ہم کو ڈانٹتی تھیں،یہ کیا بڑوں سے اس طرح کا سوال ؟لیکن ان پنڈتوں کا جواب گلے سے نہیں اترتا تھا،چچی توجھنجھلا کر کہہ دیتی کہ ابھی تو چھوٹا ہے ،یہ سب باتیں تیری سمجھ میں نہیں آئیں گی،اور رشتہ داروں کے گھر اس وجہ سے جانا چھوڑ دیا تھا کہ عمر میں جو بڑے ہیں ان سب کو سجدہ کرنا پڑتا تھا، اس تبدیلی کی وجہ سے گھر والوں کا دھیان میری طرف مرکوز ہوگیا ،مجھے شک کی نظر سے دیکھنے لگے،ایک دن رات کو جب سب بیٹھ کر کھانا کھارہے تھے،چھوٹی پھوپھی بھی آئی ہوئی تھیں ،نہ جانے گھرمیں میرے بارے میں کیا بات ہوئی، یکایک غصہ ہوگئیں اور کہنے لگیں اس کو سب مل کر مارو،اور ڈانٹنے لگیں،میں چپ چاپ سر جھکا کر کھانا کھا کر اٹھ گیا۔
ایک دن دوپہر کو گھر کی دوسری منزل پر برآمدہ میں سوگیا، ایک خواب دیکھا کہ میں مرگیا ہوں ،مجھے جلانے کیلئے شمشان لے گئے،چتا سجائی گئی،مجھے اس پر لٹا دیا اور پھر اوپر سے میرے اوپر لکڑیا ں رکھ دی گئیں،جو مجھے چبھنے لگیں،چھ سات آدمی بہت ہی ڈراونے،بدصورت کالے کلوٹے آنکھیں سفید لگ رہی تھیں، سر پر سفید کپڑاپگڑی کی طرح لپٹا ہوا تھا،سفید دھوتی جو گھٹنوں تک پہن رکھی تھی پورا بدن ایکدم کالا ،اتنا کالا کہ آج تک میں نے ایسا کالا نہیں دیکھا،کالے رنگ کی وجہ سے سفید آنکھ بھی ڈراؤنی لگ رہی تھی،سب کے ہاتھ میں ایک ایک لاٹھی تھی، انہوں نے چیتا کے اوپر اور چاروں طرف ’’کیروسین ‘‘ڈال دیا، ایک آدمی نے آکر اس میں آگ لگا دی ،کیروسین کی وجہ سے چتامیںیکایک آگ لگ گئی،میں چتا میں لیٹے لیٹے دیکھ رہا تھا کہ آسمان بالکل صاف ہے ،سورج آسمان پر آب وتاب سے کرنیں بکھیر رہا تھا، تھوڑے فاصلے پر ہمارے دوست منصور اور عبد الخالق ایک چھوٹے سے کھجور کے درخت کی آڑ میں بیٹھ کر افسوس کررہے ہیں،کہ ہائے اس کو جلا رہے ہیں،حالانکہ وہ تو مسلمان ہو گیا ہے،اچانک کیا دیکھتا ہوں کہ سورج غائب ہو گیا،اور آن کی آن میں آسمان میں کالے بادل چھا گئے،فوراً ہی تیز آندھی اور موسلا دھار بارش شروع ہو گئی،وہ جو کالے کالے چھ سات لوگ تھے سب کچھ چھوڑ چھاڑ کر بھا گ گئے،ان کا بھاگنا تھا کہ طوفانی ہوا اوربارش ایک دم سے رک گئی،اسی وقت سورج بھی آسمان پر نمودار ہو گیا،یہ دونوں ساتھی دوڑتے ہوئے چتا کے پاس آئے اور لکڑی ہٹا کر مجھے باہر نکالا،اور منہ پر پانی کا چھڑ کاؤ کیا،میں نے آنکھ کھول دی ،میں نے دیکھا کہ میرا پورا بدن گورا ہو گیا،اور کہیں کہیں آگ لگنے کی وجہ سے کالے کالے داغ پڑ گئے،وہ ساتھی مجھے اپنے گھر لے گئے،اور مجھے کھانا پیش کیا،کھانے کا لقمہ منہ میں رکھا ہی تھا کہ آنکھ کھل گئی اور میں ڈر کے مارے دوڑتے ہوئے نیچے آگیا،میرا برا حال تھا لیکن کسی کو کچھ نہیں کہہ سکا،اب تو میں اللہ کو یاد کرکے تنہائی میں روتا تھا کمرہ بند کرکے نماز پڑھنے کی کوشش کرتا ،لیکن سوائے اٹھک بیٹھک کے کچھ نہیں کرسکتا تھا،ایک دن میری بہن نے کسی طرح دیکھ لیا کہ میں بند کمرے میں قبلہ کی طرف منہ کرکے ہاتھ باندھ کر نماز میں مشغول ہوں ،دروازہ کھٹکھٹایا،میں نے فورًا دروازہ کھول دیا ،بہن کہنے لگی کیا نماز پڑھی جارہی تھی؟میں نے کہا ورزش کررہاہوں،اس لئے کہ وہ میرا ورزش کا وقت بھی تھا،اس نے جاکر والدصاحب سے شکایت کردی،میں نے کہامیں ورزش کررہا تھا،اس کو ایسا لگا کہ میں نماز پڑھ رہاہوں ،والد صاحب کو میری ورزش کے بارے میں معلوم تھا ،اس لئے مجھے کچھ نہیں کہا،رمضان کا مہینہ چل رہا تھا،روزہ رکھنے کو جی بہت چا ہتا تھا ، بغیر سحری کھائے روزہ رکھنا چاہا لیکن امّی ناشتہ کے لئے کہتی تھیں،میں نے کہا میرا ناشتہ ڈھک کر رکھ دیجئے بعد میں کھالوں گا ، کوئی سائل آتا تو ان کو چپکے سے ناشتہ دیدیتا تاکہ یہ سمجھیں کہ میں نے ناشتہ کرلیا،لیکن دوپہر تک ہی روزہ کی حالت میں رہ سکتا تھا،اس لئے کہ دوپہر کو سب کے ساتھ کھانا پڑتا تھا،مجھے اسلام کے بارے میں کافی معلومات ہو چکی تھیں،گھر کے لوگ ،والد صاحب اور دادا سے شک کا اظہار کرتے تو محبت کی وجہ سے میری کسی بات پر کان نہیں دھرتے تھے،ایک دن مصطفی نام کے اسکول کے ایک ساتھی (جس کے گھر میرے ایک چچا ٹیوشن پڑھانے جاتے تھے)کہنے لگے تو کیا چاہتا ہے،تجھے مرنا ہے یا جینا؟میں نے تعجب سے پوچھا کیوں کیا بات ہے؟اس نے کہا کہ تیرے بارے میں تیرے چچا کا ارادہ خطرناک ہے،جو کرنا ہے بہت ہی جلدی فیصلہ کر ڈال،یہ سن کر فکر ہوئی ،کیا کروں؟اللہ نے ایک بہترین ترکیب دماغ میں ڈالی،ایک ڈرامائی انداز اختیار کیا رات کو گھر کے سبھی لوگ ایک ساتھ بیٹھے تھے ،چھوٹے دادا کے پاس گیا جو ہندو مذہب کے بہت ہی پابند تھے،میں نے کہا کہ دادا چلئے مایا پور چلیں(ایک بہت مشہور جگہ جہاں پر ’’شری چیتنےَ ‘‘کا بہت بڑا مندر ہے)بھگوان’’ شری چیتنے‘‘جی کا درشن کرکے آتے ہیں،یہ کہہ کر بھگوان کی کئی کتابیں گھر میں رکھی تھیں،زور زور سے پڑھنے لگا،اور ساتھ ہی ساتھ یہ کہتا جاتا اہا بھگوان کی وانی تو دیکھئے کتنی اچھی بات کہی ہے وغیرہ وغیرہ،ایک ہفتہ تو ایسا ہی ڈراما کرتا رہا، اور گھر والوں کو اب یقین ہو گیا کہ اب اس نے پرانی باتیں چھوڑ دی ہے ،اور اب ہندو مذہب کو ماننے لگا ہے،نگرانی بھی کم ہوگئی،ایک مسلم ساتھی نے کہا کہ اگر تمہارا ایفی ڈیوٹ بن جائے تو قانونی اعتبار سے تم محفوظ ہو جاؤ گے،یہ کہہ کر وہ خود ہی ڈسٹرکٹ قاضی کے پاس گیا سارے حالات بیان کئے قاضی صاحب نے کہاابھی عمر اٹھارہ سال ہے،بائیس سال کی عمر ہو گی تو ہم ایفی ڈیوٹ دے سکتے ہیں ،ہم کو بہت مایوسی چھا گئی ،پھر ایک مدرسہ کے مہتمم صاحب جو بڑے بااثر تھے،ان کو بھی یہ تمام باتیں بتا کر مشورہ لیناچاہا،انہوں نے خاندان کا نام سنتے ہی فرمایا کہ وہ خاندان بہت ہی کٹر ہے،وہ کسی کو نہیں چھوڑے گا،جاؤ ابھی تم چلے جاؤ،جب بائیس سال کی عمر ہو جائے تب ایفی ڈیوٹ بنا لینا،اور آج سے تمہارا نام نورا لاسلام رکھتا ہوں،وہاں سے بھی مایوس واپس ہونا پڑا،اب تو گھر والوں نے نگرانی کم کردی تھی،پھر بھی سنیما کا بہانا کرنا پڑتا ،میرا مسلمان ہو نے کا پکا ارادہ دیکھ کر ایک ایک ساتھی نے مجھ سے ملنا جلنا چھوڑدیا،یہ کہہ کر تمہارے خاندان کے لوگ ہم لوگوں کو چھوڑیں گے نہیں ،ایک دن دکھے دل کے ساتھ گاؤں کی مسجد کے امام صاحب کے پاس جاکر کہا کہ امام صاحب کیا کروں،اب تو کفر اور ناپاکی سے نکلنا چاہتا ہوں ،کچھ تو مشورہ دیجئے،چار سال تک تو گھر میں اس طرح رہ نہیں سکتا ،کہیں ایسا نہ ہو کہ شیطان میرے اس ایمان پر حملہ کردے،اور مجھے پھر کفر میں زندگی گذارنی پڑے،اور میں پھر ہندو ہو جاؤں۔
انہوں نے کہا کہ دیکھو تم فلاں بازار میں چلے جاؤ،اور وہاں تیسری منزل پر ایک مسلمان کی دکان ہے ،وہاں پر عبد الرزاق رتھ نام کے ایک نومسلم آتے ہیں جاؤانہیں سے مشورہ کرلو،وہ تم کو صحیح راستہ دکھائیں گے۔
مقررہ وقت پر اس دکان پر پہنچ گیا،اس دکان پر ایک نوجوان مسلمان کام کرتا تھا،جو مجھے پہچانتا تھا،پوچھا کیا کام ہے؟ میں نے پوچھا عبد الرزاق رتھ یہیں پر آتے ہیں ، لیکن کیا کام ہے؟ میں نے کہا مجھے ملنا ہے،اس جوان نے اندر جاکر سیٹھ کے کان میں کچھ کہا ،سیٹھ نے اندر بلا لیا ،ماشاء اللہ نورانی چہرا ، سفید داڑھی ،سنتی لباس،پوچھابھائی عبد الرزاق سے آپ کو کیا کام ہے؟ میں ادھر اُدھر دیکھنے لگا،پھر آہستہ سے کہا مجھے مسلمان ہو نا ہے، سیٹھ صاحب میرا ہاتھ پکڑ کر اندر آفس میں لے گئے،اور پھر رونے لگے ،میرے بھائی تو نے اسلام میں ایسا کیا دیکھ لیا،اس کچی عمر میں گھر بار رشۃ داروں کو چھوڑنے کا بھی فیصلہ کرلیا،پھر روتے روتے مجھے سینے سے لگا لیا،پھر اس جوان سے کہا تو دکان کے گیٹ پر کھڑا ہو جا تاکہ ادھر کوئی گاہک یا کوئی دوسرا شخص نہ آسکے،اور اپنے داماد اور ایک دو رشتہ داروں کو بلا لیا ،پھر عبدالرزاق رتھ صاحب بھی آگئے،جن کا پہلا نام مدن موہن رتھ تھا،سب کچھ سننے کے بعد کہا کہ تم گھر چلے جاؤ،تمہارا کام نہیں ابھی تم چھوٹے ہو،تم ایک تھپڑ کے بھی نہیں ہو،یہ کہہ کر اپنا ہاتھ دکھایا ، جس کو تھانے میں داروغہ نے بلیڈ سے چیر ڈالا تھا،پاؤں دکھایا جہاں پر کیل ٹھوکی تھی،پھر کہا پیٹھ پر بھی بڑے بڑے داغ پڑے ہیں ،لیکن اللہ کے فضل سے یہ سب دیکھ کر بھی مجھے ذرا بھی ڈر نہیں لگا،نہ اپنے ارادے سے ہٹا،سب نے مل کر مشورہ کیا کہ ان کا کچھ ایسا انتظام کیا جائے کہ یہ ان کے خاندان والوں کے ہاتھ نہ لگے، آخر یہ بات طے ہوئی کہ ابھی عمر کم  ہے سال کچھ بھی کرکے ان کو ایسی جگہ چھپا کر رکھو جہاں ان کے خاندان والے نہ پہنچ سکیں ، عبد الرزاق صاحب نے سب کے سامنے وعدہ کر لیا کہ ہم ان کو کلکتہ مٹیا برج میں ایک با اثر آدمی کے وہاں چھوڑ آتے ہیں،اور وہیں اسلامی تعلیم بھی حاصل کرتے رہیں گے،دن ،تاریخ اور جگہ مقرر ہو گئی کہ وہاں سے آپ کو لے کر چلا جاؤنگا،جب مشورہ کرکے ہم نیچے اترے اس وقت بازار میں کافی بھیڑ تھی،معلوم نہیں کس طرح میرے چچا نے مجھے عبد الرزاق کے ساتھ دیکھ لیا، گھر سے جب ہجرت کرکے چلا گیا اور میرے خط سے جب معلوم ہو گیا کہ میں نے اسلام قبول کرلیا ہے تو اس وقت چچا کو یاد آیا کہ ہم نے عبد الرزاق کے ساتھ بازار میں اس کو دیکھا تھا،تو پھر والد صاحب نے ان کے نام وارنٹ جاری کرا دیا ،بیچارہ بھاگابھاگا اِدھر اُدھر پھرتا رہا،کسی نے اخبار میں ان کے قتل کی خبر چھاپ دی تھی،جس سے والد صاحب ڈر گئے،اور وارنٹ واپس لے لیا،پھر چند دن کے بعد عبد الرزاق صاحب بھی سامنے آگئے،جو روپوش ہو گئے تھے،میں نے بھی اِدھر اپنے اسکول کے ساتھی مدن کے ساتھ تفریح کا پروگرام پہلے ہی سے بنا رکھا تھا،مدن کے پاس جاکر کہا کہ کیا پروگرام پکا ہے؟اس نے بتایا دو تین دن بعد چلیں گے،میں نے کہا کہ میں تو جارہا ہوں تم لوگ بعد میں آجانا،ان کو یہ بھی سمجھا دیا کہ میرے پتا جی کچھ بھی پوچھیں گے تو کہہ دینا کہ ہم لوگوں کا پروگرام تھا لیکن وہ پہلے چلے گئے،اصل مقصد یہ تھا کہ تلاشی شروع ہو نے سے پہلے ہی ہم خطرے کی حد سے دور چلیں جائیں،اس پروگرام کے مطابق میں مدن کا بہانہ کرکے گھر سے نکل گیا۔
عبد الرزاق صاحب پروگرام کے مطابق مقررہ جگہ پر نہیں پہنچ سکے ،مایوس ہو کر میں اسی دکان پہنچ گیا،ان لوگوں کو بہت ہی افسوس ہوا کہ اگر گھر والوں کو ذرا بھی ہوا لگ گئی تو پھر سارا معاملہ دھرا رہ جائے گا،بوڑ ھے سیٹھ جی جن کو ہم دادا کہہ چکے تھے ،بہت ہی افسوس کرتے رہے،پھر ہم کو تسلی دی کہ آٹھ دن کسی طرح سنبھل کر گذار لو،ان شاء اللہ تم کو اپنے بھانجے کے ساتھ سہارنپور بھیج دوں گا،ان شاء اللہ وہاں تم کو کوئی تلاش نہیں کر سکے گا،آٹھ دن بعد ۲۲؍دسمبر ۱۹۷۷ ؁ ء کو پھر مدن کا بہانہ بنا کر صبح صبح گھر سے نکل گیا،اس وقت عجیب لگ رہا تھا ، ایسا لگ رہا تھا جیسے ہر چیز مجھے الوداع کہہ رہی ہو،ریلوے اسٹیشن تک پہنچے اللہ نے دو جگہ خوب خوب حفاظت فرمائی،ایک تو جب بس سے جارہا تھا تو بالکل قریب ہمارے وہ استاذ بیٹھے ہو ئے تھے جو ہمیں گانا سکھاتے تھے، لیکن خدا کی قدرت کہ وہ مجھے نہ پہچان سکے،ورنہ وہ پوچھتے ضرور کہ اس طرف کہاں؟اس کے بعد بس اڈہ سے دادا جی (سیٹھ جی شمس الدین خاں صاحب)ساتھ ہو گئے، ان کے ساتھ چل رہا تھا ،کہ دور کے رشتہ کے ایک مامو ں کے روڈ پر کام چل رہا تھا ،وہ ایک دم بیچ روڈ پر تھے،مسلمان کے ساتھ اگر دیکھ لیتے تو بڑی مصیبت کھڑی ہو جاتی ،لیکن اللہ نے میری طرف سراٹھا کر دیکھنے کی نوبت ہی نہیں دی ،اللہ کا شکر ادا کرتے کرتے ہم وہاں سے نکل گئے،پھر ہم دادا جی (سیٹھ شمس الدین خان ) کے بھانجے کے ساتھ سہارن پورپہنچے،انہوں نے ان کے علاقے کے ایک مولاناصاحب جو اس سال مظاہر علوم میں بخاری شریف پڑھ رہے تھے،ان کے پاس چھوڑ دیا ،اور کہا کہ ان کو پڑھانا ،انہوں نے مجھے بھائی کی طرح رکھا ،گھر اور عزیز واقارب سے اچانک جدائی کی وجہ سے ان لوگوں کا پیار ، محبت بہت ستاتا تھا ،او ر میں روتا رہتا تھا،کسی کسی وقت تنہائی میں مسجد کے ستون کو پکڑ پکڑ کر روتا تھا اس وقت مولانا صاحب بہت تسلی دیتے تھے اور سمجھاتے تھے کہ اللہ نے تم کو اسلام کی دولت دی ،اور تم کو جہنم کی آگ سے بچالیا، چند دن گذرنے کے بعد دادا جی (سیٹھ شمس الدین خان) کا خط آیا جس مین تاکید تھی کہ بہت سنبھل کر رہنا،مسجد سے باہر مت نکلنا ،یہاں پر تمہارے پتا جی نے طوفان برپا کر رکھا ہے ، ان کو یقین ہو گیا ہے کہ تم مسلمان ہو گئے ہو ، اور تم کو یہاں کے مسلمانوں نے کہیں چھپایا ہے ، یہاں پر لوگ چاروں طرف تلاش کرتے پھر رہے ہیں جن کے اوپر شک جاتاہے ان کو دھمکی دے رہے ہیں۔
میں نے دادا جی کے پتے پر ایک خط لکھا اور اس لفافے کے اندر پتا جی کے نام ایک خط لکھ کر دوسرے لفافے میں ڈال کر بھیج دیا ،دادا جی کو یہ بھی لکھ دیا کہ دوسرا لفافہ ہاوڑہ اسٹیشن یادور جہاں آپ کو سہولت ہو پوسٹ کر دیجئے گا، تاکہ اسی جگہ کی ہی مہر لگے ،تو پتا جی کو سہارن پور کا پتہ نہیں چل سکے گا،اور پتا جی کو میں نے خط میں لکھا تھا کہ آپ لوگ فکر نہ کریں میں بہت آرام کے ساتھ ہوں اچھا ہوں اور دھارمک جگہ پر ہوں ،اتفاق سے خط پرمہر کسی آشرم کے قریب کی جگہ کی تھی، پتا جی نے وہاں کے آشرم کو چھان مارا، لیکن کوئی اطلاع نہ مل سکی،پھر چند دن بعد اسی طرح ایک خط کے ذریعہ اپنے اسلام قبول کرنے کی اطلاع بھی ان کو کردی،پھر کیا تھا ایک دم آگ بگولا ہو گئے،اور مسلمانوں کو پریشان کرنے لگے، جہاں ان کو شک ہو تا وہاں پولیس کو ساتھ لے کر چھاپے مارتے، کچھ لوگوں کو پکڑ کر سخت باز پرس کی گئی،چاروں طرف جاسوس لگا دیئے گئے،اور کئی گاڑیاں صبح ڈھونڈھنے نکلتیں اور رات کو واپس آتیں، پھر پتا جی نے ریڈیو ،اخبار اور ٹی وی میں گمشدگی کا اعلان کروادیا،اور انعام بھی مقرر کردیا۔
کئی بڑے بااثر لوگوں کے ذریعہ چیف منسٹر (C.M)جوتی باسو تک پہنچے،اور اغواکابہانہ کر کے پولیس کی مدد کیلئے سفارش نامہ اور دو جاسوس بھی حاصل کرلئے،اور پتا جی نے الگ سے ایک پرایؤیٹ جاسوس بھی لگا دیا،پھر کیا تھا جہاں شک پڑتا وہاں فورس کے ذریعہ چھاپے مارتے ،چنانچہ بعض مدرسوں میں بھی چھاپے مارے،پھر داداجی کا خط آیا کہ بھیا اگر پکڑے گئے تو پھر تمھاری خیر نہیں ہے اور اگرہم لوگوں کا نام نے بتادیا تو پھر ہم لوگ مصیبت میں گرفتار ہو جائیں گے۔
جاسوسوں کوجو فوٹو دیا گیا تھا وہ میرے چھٹی کلاس میں پڑھنے کے زمانہ کا تھا،جاسوسوں نے والد صاحب سے کہا کہ اس فوٹو سے پہچاننا بہت ہی مشکل ہے،آپ ہمارے ساتھ رہیں تاکہ دیکھ کر آپ شناخت کرلیں ،والد صاحب ان کے ساتھ میرٹھ آئے اور وہیں سے واپس ہو گئے ،اللہ تعالی نے کسی کے دل میں سہارن پور کی بات آنے ہی نہیں دی، واپس پہنچنے کے بعد ان کو سہارن پور کا خیال آیا تو والد صاحب حاجی صاحب کو لے کر جن کا لڑکا سہارن پور پڑھتاتھا،سہارن پور جانے کے لئے تیار ہوگئے،یہ بات دادا جی کو معلوم ہوگئی ،انہوں نے فوراً حاجی صاحب سے ملاقات کی اور ان کو ساری بات بتادی کہ ہم لوگوں نے ہی اس کو سہارن پور بھیجاہے،تم ہر گز نہ جانا،اس لئے حاجی صاحب نے بہانہ کر کے سہارن پور جانے سے انکار کردیا،اس پر والد صاحب نے ان کو جیل بھجوادیا،یہی وجہ ہے کہ آج بھی جب میں حاجی صاحب کو دیکھتاہوں توبہت دکھ ہوتا ہے کہ بیچارے میری وجہ سے جیل گئے۔
اس سلسلہ میں مدن کوجو میرے کلاس کے ساتھی تھے،باندھ کر اور لٹکاکر بے حد مارا کہ بتاؤ کہاں ہے تمہارا ساتھی؟اس نے فون پر بتایا کہ بھائی تم تو چلے گئے،مجھ پر اغواکا شک کر کے مجھے بہت ماراگیا،پھر جیل بھیج دیا گیا،جب تمہارا خط آیاکہ تم مسلمان ہو گئے ہو تب مجھے جیل سے چھوڑاگیا۔
چارسال سہارن پورکے مختلف مقامات اورگاؤں میں چھپ چھپ کر گزارنا پڑے،ایک دو جگہ سے سی۔آئی ۔ڈی (C.I.D) کی وجہ سے بھاگنا بھی پڑا،چار سال کے بعد کلکتہ جا کر Affidavite بنوالیا،اس کے بعد مظاہر علوم سہارن پور میں داخلہ بھی ہوگیا،اس دوران ہمارے علاقہ کے بعض ساتھیوں کے ذریعہ معلوم ہوتا رہتا تھا کہ امی پاگل جیسی ہو گئی ہیں ،یہ سن کر والدین بہت زیادہ یاد آنے لگے،گھر چھوڑے ہوئے تقریباً ساڑھے پانچ سال ہو چکے تھے۔
ان دنوں کلکتہ سے ایک جماعت سہارن پور آئی،جماعت کے امیرہمارے کمرہ کے ایک ساتھی کے والد محترم تھے اور ڈاکٹر بھی تھے،اس نے میری ملاقات اپنے والد سے کرائی،ڈاکٹر صاحب نے کہا کہ تمہارے علاقہ کے ایک ساتھی جو جماعت میں ہیں ، فوڈ کارپوریشن آفسر ہیں ،تم ان سے ملاقات کرلو میں نے ملاقات کی اور ان سے پوچھا کہ فلاں جگہ کے فلاں خاندان کا جو بچہ غائب ہو گیا تھا اس کے بارے میں آپ کو کچھ معلوم ہے؟ انہوں نے کہا :غائب ہوگیاہے یہ تو معلوم ہے،لیکن کہاں گیا ہے یہ نہیں معلوم ،اس کے گھر والے اس کو تلاش کرتے رہتے ہیں، لیکن آج تک تلاش نہیں کر پائے،میں نے کہا وہ لڑکا یہیں پر ہے ، میں اسے آپ سے ملا سکتا ہوں،لیکن ایک شرط ہے ،وہ لڑکا اپنے ماں باپ سے ملنے کے لئے بیتاب ہے،اگر آپ اپنی ذمہ داری میں ملاقات کرادیں تو بتادوں ،افسر نے کہا:ٹھیک ہے میں پوری کوشش کروں گا ،تو میں نے کہا وہ لڑکا میں ہی ہوں،افسرنے مجھے سینے سے لگالیا اور کہا :ان شاء اللہ میں پوری کو شش کروں گا،لیکن جب میں بلاؤں سیدھے میرے گھر پرہی آنا،اچانک اپنے گھر ہرگز نہ جانا،میں ماحول دیکھ کر خط لکھوں گا۔
شعبان کی چھٹی ہونے والی تھی،اس دن بہت سے ساتھی گھر جا رہے تھے،دو پہر کو کھانے بیٹھے ہی تھے کہ ڈاکیہ نے خط دیا ، لفافہ کھول کرجب خط نکالا تو میری چیخ نکل گئی کہ میرے ابا نے مجھے خط لکھا ،سب ساتھی کھانا چھوڑ کر میرے گرد جمع ہوگئے،تاکہ خط سنیں،میری آنکھوں میں آنسو آگئے،زبان لڑکھڑارہی تھی، کوشش کے با وجود نہیں پڑھ سکا،ایک دوسرے ساتھی پڑھ کر سنایا،لکھاتھا:
’’پیارے بیٹے!معلوم نہیں تم کہاں ہو،تمہارے چلے جانے کے بعد تمہارے دادا،نانا،پھوپھی وغیرہ دنیا سے چلے گئے، بلکہ تمہارے دادا تو مرنے سے پہلے یہ کہہ رہے تھے کہ میرے دادو بھائی تم کہاں ہو؟میرے دادو بھائی تم کہاں چلے گئے ہو؟ اور اس وقت تمہاری اماں موت سے لڑرہی ہیں ،ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ ماں کو بہت زیادہ صدمہ ہے،لڑکے کو ان سے ملادو تو و ہ ٹھیک ہو سکتی ہیں ،تم سے درخواست کرتاہوں کہ تم ایک بار اپنی ماں کو اپنا منہ دکھاکر چلے جاؤمیں وعدہ کر تاہوں کہ تمہارے بدن پر ایک کانٹا بھی چبھنے نہیں دوں گا،دیکھو بیٹا! اولاد کی محبت کیا چیز ہے تمہیں اس وقت معلوم ہوگی جب تمہاری اولاد ہوگی۔
خط سن کر کمرہ کے ساتھیوں کی آنکھوں میں آنسو آگئے ،اس کے بعد اسی لفافہ سے دوسرا خط نکالا جوافسر صاحب نے لکھا تھا اس میں لکھاتھا:’’میں تمہارے گھر گیا تھا،تمہارے والد صاحب ٹوٹ چکے ہیں ،میرے ہا تھ پکڑ کر خوب روئے،پھر بھی تم میرے گھر آؤ ملاقات پر سب بتاؤں گا،سیدھے میرے گھر آنا ،اپنے گھر ہرگز نہ جانا ،تمہارے والد کو میں نے تمہاراپتہ نہیں دیا،میرے آفس پر آکر یہ خط دے کر گئے جو میں نے لفافہ میں ڈال دیا۔
جب افسر کے گھر ان سے ملاقات ہوئی تو انہوں نے بتایا کہ میں تمہاری دکان پر تمہارے ابا سے ملا اور کہا کہ آپ سے آپ کے بیٹے کے بارے میں کچھ بات کرنی ہے تو ابا ایک دم غصہ ہوگئے، اور کہا آپ ذرا رکئے ،لیکن جب گاہک چلے گئے تو ابانے افسر سے کہا کہ آپ اندر آجائیں ، افسر نے بتایا کہ تمہارے ابا مجھے اندر گھر میں لے گئے اور گھرکے دروازے بند کرنے لگے تو میں ڈرنے لگا کہ نہ جانے کیا ہوگا؟پھر تمھارے ابا میرے ہاتھ پکڑ کر خوب روئے اور کہنے لگے کہ کیا تم نے میرے بیٹے کو اپنی آنکھوں سے دیکھاہے؟اور پھر کہنے لگے کہ میں نے جو غصہ کیا وہ صرف لوگوں کو دکھانے کے لئے کیاتھاتاکہ لوگوں کو یہ پتہ نہ چل جائے کہ میں اپنے بیٹے کو اب بھی چاہتاہوں،انہوں نے مزید بتایاکہ تمہاری ماں دروازے کے پاس کھڑی زاروقطار روئے جارہی تھیں،میں نے ان کو سمجھایاکہ فکر کرنے کی کوئی ضرورت نہیں وہ میرے گھر آئے گا،چنانچہ میں افسر کے گھر پہنچاتوآفسرنے ابا کو اطلاع بھیجی ، رات کو بارہ بجے ابا ۴۔۵ آدمیوں کے ساتھ ملنے کے لئے افسر کے گھر آئے، افسر کے گھر والوں کو یہ دیکھ کر کچھ شک ہوا،تو وہ لوگ خاموشی سے چھپ کرلاٹھی لے کر کھڑے ہوگئے ،کہ اگر میرے ساتھ ان لوگوں نے کچھ کیا تو ایک کو بھی یہاں سے جانے نہیں دیں گے۔
دوسرے دن صبح صبح ابا مٹھائی لے کر افسر کے گھر آگئے اور مجھے سمجھانے لگے ،طرح طرح کے سوالات بھی کر تے تھے کہ اللہ کون ہے؟ ہم تو اس کو دیکھتے نہیں تو ہم اس کو کیونکر مانیں اور اس قسم کی دوسری باتیں ۔یہ اللہ کا خاص فضل تھا کہ اس نے تمام سوالوں کے جوابات دلوائے،اس لئے پہلے سے میرے ذہن میں کوئی جواب موجود نہیں تھا،اس دوران ابانے اصرار کیا اور کہنے لگے کہ تم اسلام کو چھوڑ کر پھر سے ہندو بن جاؤ،تب میں نے کہا کہ ابا سنئے :پہلی بات تو یہ ہے کہ اگر میرے ایک ہاتھ میں سورج اور دوسرے میں چاند لاکر دیں تو بھی میں اسلام کو نہیں چھوڑ سکتا، دوسری بات یہ ہے کہ آپ ۳۳کروڑ بھگوانوں کو مانتے ہیں اور میں صرف ایک اللہ کی عبادت کر تاہوں ،ایک اللہ کو راضی رکھنے کے لئے رات دن لگا رہتا ہوں ،جب ایک معبود راضی کرنا اتنا مشکل معلوم ہوتاہے تو پھر
میں٣٣ کروڑ کو کیسے راضی کر سکوں گا؟یہ تو ناممکن ہے،ایک راضی ہوگا تو دوسراناراض ،ابا یہ میرے بس کی بات نہیں ،یہ جواب سن کر اباایک دم خاموش ہو گئے- پھر ابا جی نے مندرکے پجاریوں سے ملنے کے لئے مجھ سے بہت ضد کی ،میں نے کہا :مندر تو نہیں جا سکتا ،البتہ گروجی یہاں آئیں گے تو بات کر لوں گا ،کہنے لگے :وہ بہت بڑے آدمی ہیں،یہاں نہیں آئیں گے ،پھر ایک شخص سے ملنے کے بہانے ایک پرانے مندر میں مجھے لے گئے،دیکھا کہ مندر کے آفس میں وکیل، ڈاکٹر وغیرہ سب میرے انتظار میں بیٹھے ہیں ،میرے اللہ نے وہاں بھی میری خوب خوب مدد کی ،سب باری باری مجھ سے طرح طرح کے سوالات کرتے رہے اور میں ان کے جواب دینے کے بعد خود انہیں لوگوں سے ہندو دھرم کے بارے میں جو سوال کر تاتھا اس کا جواب کسی سے نہیں بن پڑتاتھا،ایک گھنٹہ کی بحث کے بعد ڈاکٹر صاحب جو ہمارے رشتہ دار بھی تھے بول اٹھے کہ بھائی جانے دو،ان کو واپس ہندو بنانا اب ممکن نہیں ہے،یہ تو بالکل پختہ ہو چکاہے ،واقعی مجھے معلوم نہیں کہ کیسے کیسے میں نے ان کے سوالوں کا جواب دیا،جیسے لگتاتھا میرے اندر سے کوئی بول رہاتھا ،اللہ تعالی کی مدد میں نے دیکھ لی ،میرے اللہ نے میرا ایمان بچالیااور کسی قسم کی کوئی تکلیف بھی کسی نے نہیں پہنچائی۔
سہارن پور سے جب دوسری مرتبہ افسر کے گھر گئے تو ابانے کہا کہ اب تو گھر چلو ،بہت دن سے سب لوگ تم کو دیکھنا چاہتے ہیں ،میں نے کہا :گھر تو نہیں جا سکتا ،ابانے کہا :میں وعدہ کرتا ہوں کہ تمہارے ساتھ کچھ ہونے نہیں دوں گا،چنانچہ ہم رات کو گھر پہنچے تو گھر میں ایک بھیڑ لگ گئی ،ابا کے چچا کے خاندان کے لوگ ہمارے بازومیں رہتے تھے تو ابا کے چچا نے کہلوایا کہ اس کو ہمارے گھر بھیج دو ،ابانے نہ چاہتے ہوئے بھی مجھے بھیج دیا ،پہلے تو دادا وغیرہ نے خیر خیریت پوچھی ،پھراچانک کہیں سے ان کے لڑکے جو میرے چچا لگتے تھے ،آگئے اور مجھے دیکھ کر غصہ سے چیخنے لگے کہ تو یہاں کیوں آیا؟تونے ہمارے خاندان کا سرنیچاکردیا،تو ہمارے خاندان پر کلنک ہے،تو مرجاتا تو اچھاہوتا،اور نہ جانے کیاکیا بولے جارہے تھے،قریب تھا کہ پاس پڑی لکڑی میرے سر پر دے ماریں،چیخ سن کر ابا جلدی آئے اور میرا ہاتھ پکڑ کر وہاں سے اپنے گھر لے آئے،اور صبح اندھیرے میں گھر کے نوکر کے ساتھ مجھے افسر کے گھر پہنچوا دیا،پھر میں سہارنپور واپس چلاگیا۔
پالن پور کے ایک ساتھی سید مولاناابراہیم صاحب جو سہارن پور مظاہر علوم میں پڑھتے تھے مجھے بہت چاہتے تھے ، گجرات آنے کا ذریعہ بنے ، پھر پالن پور میں جناب فتح محمد صاحب ٹیلر ماسٹر نام کے ایک شخص تھے جو اصلاً راجستھان کے رہنے والے تھے معلوم نہیں انہوں نے میرے اندر کیا دیکھا کہ ایک دن مسجد میں مجھے دیکھ کر خوشی کے مارے ہنس بھی رہے تھے اور آنکھیں بھی تر تھیں، کہنے لگے میرے تین بیٹے ہیں لیکن تم میرے چوتھے بیٹے ہو اور ان تینوں کے بڑے بھائی ہو ، پھر انہی کے ذریعہ حضرت مولانا کفایت اللہ صاحب ؒ سے ملاقات ہوئی انہوں نے بھی اپنا بنالیا اور اپنے ایک خاص دوست حضرت مولانا محمدیونس صدیقی صاحب ؒ جو حضرت مولانا عبد الحلیم صاحب ؒ جونپوری کے خلیفہ تھے ،جنہوں نے احمدآباد کے قریب’’ کڈی‘‘ نام کے ایک قریہ میں ایک مدرسہ قائم کیا اور وہیں اخیر عمر تک خدمت انجام دی،ان کی صاحب زادی (جوحافظہ اور صالحہ ہیں ) سے نکاح کروادیا جن سے اللہ رب العزت نے چار لڑکیاں اور چار لڑکے دئیے،الحمدللہ ایک لڑکی اور تین بچوں نے حفظ مکمل کرلیا ایک بچہ درجۂ عربی پنجم میں تعلیم حاصل کررہاہے ،اللہ رب العزت تمام ہی بچوں کو دین کا داعی بنائیں ، آمین 
کافی سال بعد حضرت مولانا محمد کلیم صاحب صدیقی دامت برکاتہم سے ملاقات ہوئی ، حضرت نے فکر دلائی کہ گھروالوں کے اسلام کے بارے میں فکر کریں،خدا کے فضل وکرم سے تقریبا ۸؍مارچ ۲۰۱۰ ؁ء کوکچھ عزیزوں نے کلمہ پڑھ لیا ،اور پھر بہن کو بھی خوب سمجھا یا تو بہن نے بھی کلمہ پڑھ لیا،باقی خاندان والوں پر کام جاری ہے، مجھے بہت افسوس ہے کہ پہلے سے فکر کرتا تو بہت سے لوگ جو خاندان کے انتقال کرگئے ہیں وہ دوزخ سے بچ جاتے، حضرت واقعی سچ کہتے ہیں کہ نمک کی کان میں جو جاتا ہے نمک بن جا تا ہے۔مہاجر مسلمان بھی خاندانی مسلمانوں میں آکر ،خاندانی مسلمانوں کی طرح اپنے خاندان والوں سے بے فکر بس اپنی اپنی فکر کے ہوجا تے ہیں، اس لئے ملت میں دعوتی شعور پیداکرنا بہت ضروری ہے۔
حضرت مولانا کے حکم سے خونی رشتہ کے بھائیوں میں کام شروع کردیا ہے ان کے پاس جانا ہوتا ہے تو معلوم ہوتا ہے کہ وہ لوگ جس مذہب کو مانتے ہیں اس سے وہ کچھ بھی واقف نہیں ایسے خالی الذہن لوگوں کو صحیح مذہب سمجھانا بہت آسان ہے اگر اس پر ہر مسلمان عمل کرکے ان کو دعوت دے تو دن دور نہیں کہ قوموں کی قومیں اسلام میں داخل ہوسکتی ہیں،مگر ہم سنجیدگی سے کوشش نہیں کرتے، کبھی کبھی دل بہت تڑپتا ہے کہ کیسے ان لوگوں تک دین پہنچایا جائے،ان تک دین نہ پہنچنے کی وجہ سے کتنے لوگ روز دوزخ کا ایندھن بن جاتے ہیں،کبھی کبھی اس خیال سے دعوت دیتے ہوئے بے اختیارہوجاتا ہوں،اور پھوٹ پھوٹ کررونے لگتا ہوں،ماحول بالکل سازگار ہے گجرات جیسے علاقے میں ہم لوگ دعوت کاکام کرتے ہیں مگر ایک بار بھی کسی نے ناگواری کا اظہار نہیں کیا،بکہ بہت احسان مانتے ہیں اور قدر سے دین کی بات سنتے ہیں،ایسے ماحول میں ہم فائدہ نہ اٹھائیں تو بہت ظلم کی بات ہے۔